Infallibility of Hassan ibn Ali[as]


We question the infallibility of the Shia Imam from their own book al-Kafi:

First of all let us see how does Allah view the Man that divorces a lot of women:

عَلِيُّ بْنُ إِبْرَاهِيمَ عَنْ أَبِيهِ عَنِ ابْنِ أَبِي عُمَيْرٍ عَنْ غَيْرِ وَاحِدٍ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ مَا مِنْ شَيْ‏ءٍ مِمَّا أَحَلَّهُ اللَّهُ عَزَّ وَ جَلَّ أَبْغَضَ إِلَيْهِ مِنَ الطَّلَاقِ وَ إِنَّ اللَّهَ يُبْغِضُ الْمِطْلَاقَ الذَّوَّاقَ .

‘Ali ibn Ibrahim from his Father from Ibn Abi ‘Umayr from several people from al-Sadiq (as): There is not one permissible act which is more hateful to Allah than divorce and Allah HATES the man who divorces a lot.

source: al-Kafi 6/54. Grading: al-Majlisi said: Hasan.

مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى عَنْ أَحْمَدَ بْنِ مُحَمَّدٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ يَحْيَى عَنْ طَلْحَةَ بْنِ زَيْدٍ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ سَمِعْتُ أَبِي ( عليه السلام ) يَقُولُ إِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَ جَلَّ يُبْغِضُ كُلَّ مِطْلَاقٍ ذَوَّاقٍ.

Muhammad ibn Yahya from Ahmad ibn Muhammad from Muhammad ibn Yahya from Talha ibn Zaid from al-Sadiq (as): I heard my father (as) say: Allah HATES every man who divorces a lot.

source: al-Kafi 6/55.  Grading: al-Majlisi said: Muwaththaq.

مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ الْحُسَيْنِ عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ مُحَمَّدٍ عَنْ أَبِي خَدِيجَةَ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ إِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَ جَلَّ يُحِبُّ الْبَيْتَ الَّذِي فِيهِ الْعُرْسُ وَ يُبْغِضُ الْبَيْتَ الَّذِي فِيهِ الطَّلَاقُ وَ مَا مِنْ شَيْ‏ءٍ أَبْغَضَ إِلَى اللَّهِ عَزَّ وَ جَلَّ مِنَ الطَّلَاقِ .

Muhammad ibn Yahya from Muhammad ibn al-Hussein from ‘Abdul-Rahman ibn Muhammad from Abu Khadeejah from Abu ‘Abdullah (as): Allah loves the Bayt(house) that has a wedding ceremony and hates the Bayt which has a divorce, there is Nothing more HATEFUL to Allah than divorce.

source: al-Kafi 6/54.  Grading: al-Majlisi said: They differed on it.

Now the main event:

حُمَيْدُ بْنُ زِيَادٍ عَنِ الْحَسَنِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ سَمَاعَةَ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ زِيَادِ بْنِ عِيسَى عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ سِنَانٍ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ إِنَّ عَلِيّاً قَالَ وَ هُوَ عَلَى الْمِنْبَرِ لَا تُزَوِّجُوا الْحَسَنَ فَإِنَّهُ رَجُلٌ مِطْلَاقٌ فَقَامَ رَجُلٌ مِنْ هَمْدَانَ فَقَالَ بَلَى وَ اللَّهِ لَنُزَوِّجَنَّهُ وَ هُوَ ابْنُ رَسُولِ اللَّهِ ( صلى الله عليه وآله ) وَ ابْنُ أَمِيرِ الْمُؤْمِنِينَ ( عليه السلام ) فَإِنْ شَاءَ أَمْسَكَ وَ إِنْ شَاءَ طَلَّقَ .

Humayd ibn Ziad from al-Hassan bin Muhammad bin Sama’ah from Muhammad ibn Ziad ibn ‘Isa from ‘Abdullah ibn Sinan from al-Sadiq (as): ‘Ali(as) said while on the Mimbar: Do not wed your girls to al-Hassan because he is a Man that Divorces a Lot, then a man from Hamdan stood up and said: Yes by Allah we will grant him our girls because he is the son of Rassul Allah SAWS and the son of Ameer al-Mumineen (as) so if he wants he keeps them and if not he divorces.

source: al-Kafi 6/56.  Grading: al-Majlisi said: Muwaththaq.

عِدَّةٌ مِنْ أَصْحَابِنَا عَنْ أَحْمَدَ بْنِ مُحَمَّدٍ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِسْمَاعِيلَ بْنِ بَزِيعٍ عَنْ جَعْفَرِ بْنِ بَشِيرٍ عَنْ يَحْيَى بْنِ أَبِي الْعَلَاءِ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ إِنَّ الْحَسَنَ بْنَ عَلِيٍّ ( عليه السلام ) طَلَّقَ خَمْسِينَ امْرَأَةً فَقَامَ عَلِيٌّ ( عليه السلام ) بِالْكُوفَةِ فَقَالَ يَا مَعَاشِرَ أَهْلِ الْكُوفَةِ لَا تُنْكِحُوا الْحَسَنَ فَإِنَّهُ رَجُلٌ مِطْلَاقٌ فَقَامَ إِلَيْهِ رَجُلٌ فَقَالَ بَلَى وَ اللَّهِ لَنُنْكِحَنَّهُ فَإِنَّهُ ابْنُ رَسُولِ اللَّهِ ( صلى الله عليه وآله ) وَ ابْنُ فَاطِمَةَ ( عليها السلام ) فَإِنْ أَعْجَبَتْهُ أَمْسَكَ وَ إِنْ كَرِهَ طَلَّقَ .

Some of our companions from Ahmad ibn Muhammad bin Ismael bin Bazi’i from Ja’afar bin Bashir from Yahya bin abi al-‘Alaa from al-Sadiq (as): al-Hassan bin ‘Ali (as) divorced fifty women so ‘Ali went to al-Kufah and told the people in his sermon: O people of Kufah do not wed your daughters to al-Hassan because he is a man who divorces a lot, so a man stood and said: Yes by Allah we will grant him our girls because he is the son of Rassul Allah SAWS and the son of Fatimah (as) so if he likes he keeps them and if not he divorces.

source: al-Kafi 6/56.  Grading: al-Majlisi said: Majhool.

Question:  So was God pleased with hassan ibn ali[as], according to Shia’s??!!

6 Comments

Filed under Infallibility issues with shia imams, Question bank for shiite's, Shiite's sahih hadith

6 responses to “Infallibility of Hassan ibn Ali[as]

  1. Astaghferullah, why my Allah , you kept me alive to read such blasphemy like this
    ” So was God pleased with hassan ibn ali[as]” and hazrat Ali (a s) saying don’t mary
    my son ,( ma’az Allah) he divorces too much . Not few but fifty Lahaul walaquowat.Listen:
    Rasool e Maqbool (saaws) called Hasan Husain Sayed shabab e Ahlal Jannah, they are pieces of my own flesh and Allah sends Gibraeel e Ameen to convey the Ayet of Taharat, purity, infallibility when both the sons, his father and mother were under the Kisa e Yamini , can these blasphemous writers of the site, tell me is this a fact or not and if this is not can you tell me whether this hadees was also narrated by Lady
    Ayesha and is reported in your saheeh? Another question , why she was excluded and was not also pure enough to be included under the kisa, if the sheet could include 5 can’t it include one more , OK she may not have been tahir enough at that very time why she and her father and the other lady and her father was not included when the call for the Mobahilah came , were they not so closely related , was their daughters not ladies of the house , ahlebayt?or they just didnt fit enough.This clearly and conclusively defines Ahlebait,only the Panjtan,definitely not viwes.
    You must realise and look forward to be dragged towards the Jahannum if you claim to be a muslim and use such derogatery words for the childrens of your own Prophet(saaws) for whom Aanhazrat (S) lovingly used to call his own sons , if you have this respect for the sons of your own Prophet , your charecter is obvious and now I have no doubt about the authencity of the ahadees in which the lineage of umar bin khattab is narrated, then the charecter of AbuBakr is given and there is a mention that Ummul Momeneen angrily called the third Khalifa an apostate and wajibul Qatl and the muslims did qatl him ultimately.
    It seems that you people who are provoking with such malicious blaspemous and false propagandas against the progeny of your own Rasool take pleasure in drawing the La’anat and the curse of Allah and no doubt that your Hero Yazeed Maloun Son of your Ameeral Munafeqeen realy attacked Ka’abah , converted into stable and got raped innumerable girls and ladies whose vast illegitimate progeny population makes the majority of your tribe who falsly call themselves muslim and use filthy abuses shamelessly for the progeny of your own Rasool. May Allah Don’t let me encounter any such more blasphemous utterences from the cursed abusers who have lost every sence after their criminal Qaid used similler words at the death bed of his paighamber e Allah and set fire to the door of his loving daughter hurting her, breaking her ribs , killing her unborn son.
    For ref. accepting the event see the movie on you tube “Maulana Ishaq Sunni Aalim
    “shia sunny unity “Are shia kafir ? Also see {edited} ‘can you handle Truth’

  2. I got some more informations on the topic and herewith add the following:-

    http://www.turntoislam.com/forum/showthread.php?t=37981
    http://www.TurnToIslam.com > General Discussions > Islamic Discussion
    Imam Hassan’s marriages,divorces
    Originally Posted by Salem9022
    “Some put the number of his marriages to 70,90,250,300 respectively.”
    loooooooooooooooooooooooool wow There were 70 Billion Women he got Married to during the 7th Century? Where is this information from akhi?
    LoL bro, you are funny. Just read it like this 70 or 90 or 250 or 300. Originally Posted by Salem9022
    “Some put the number of his marriages to 70,90,250,300 respectively.”Abu Talib Makki says: “`Ali used to say that Hasan is a habitual divorcer; do not give him your daughters.” The question is, why `Ali told people in public not to give Hasan their daughters? Had he, first, told Hasan not to divorce so much? If so, did Hasan disobey him? Nobody says that Hasan was, God forbid, a disobedient son. Even Abu Talib Makki admits that Hasan was like the Holy Prophet in facial features and in manners and character. Can a disobedient son be universally accepted as having the character and manner of the Holy Prophet?Or did `Ali ( a s) forbid people in public without first trying to restrain Hasan (a s ) from this alleged behaviour?Can `Ali (a s ) be expected to do such a childish thing, degrading his heir-apparent in public, without first advising him accordingly? As both alternatives lead to absurdity, the only conclusion remains that this report was forged by someone who wanted to discredit both `Ali (a s) and Hasan (a s ) by one fabrication.
    And as far as the fabrication of false ahadees are concerned, we know for certain that Omar bin Khattab gave such a hard slap on the face of abu horairah that he fell bleeding and the Lady Ayesha is also reported to have reprimanded him from narrating false stories which she knew her husband never said . It is also well known that he was lavishly paid by Moaviah (l a )for abusing Ameeral Momeneen (a s ) from the pulpit of Rasool e Akram (s). Unfortunately the majority of musalmaans follows those fiqh which were established 200 years later by the so called four Imams, on the basis of, to a large extent, by the same very narrator . It is for this specific reason that Ahkam e deen differ so much among the four Imam’s followers that in the Namaz alone there are more than 2 dozen differences and each one call the other kafir o mushrik . How true to the point they are .Take for wazoo, how they do, it definitely is not according to the holy Qora’an, as such centuries of prayers by billions of musalmans remain only yogic exercises . How pity and how unfortunate they forgot or deliberately ignored the Rasool e Kareem’s (saaws) parting advice “Inny tarekum fi saqlain, kitab Allah wa itrati ‘” What was so odd in following them instead what was dictated by the Usurper, the Terrorist and the Cheat, for they illegitimately grabbed the power. But that was then and now you have to mind your own life, why can’t you change even today , with so much information available which one can sieve from the polluted with wrong to the Right and pure .Now see they have committed a blasphemy, they have abused my Maulah (a s ), it was not so tough to ignore if they had abused me personally but they committed this to the sons of our Prophet (saaws), yes son because he (s) used to call them as pieces of his own flesh, he used to say that they are the leaders of the youths of Paradise, they are my son and with them will be raised my progeny.
    Another point is the IQ level of the youths of your community. As above you have seen.Yes 70 billion he perceived Then take the narrators, one says 70, other says 90,yet another 250 and 300.If you calculate iddah and all , in his short life, that Imam (a s) had, he could not have married more than 30 . So even if one figure say 70 and is taken for granted then the person who said 90 was a liar, 250 was a liar and so is the one who narrated 300. So by this count 75% of the community are proved to be rabid liars who also committed blasphemy to the messenger of their Lord, confirmed themselves Kaffir o mushriks indeed, who face certain jahannum. Allah can never be razi with them. And mind it, there is still time, take for example, as very often I mention, the most eminent Ulema e Ahle Sunnah like Allamah Rashidul Khairi (alaihurrehmah) , Allamah Dr. Tejani, Allamah Sheikh Jehad, Allamah Obaidullah Aazmi , the list is endless, did found the TRUTH, have become the great preachers, admirers and followers of the Ahlebayt(a s) ba tawassul 14 Masumeen(a s)have created great positions in this very world & a bright hereafter
    Dr. Mohammad Iqbal who was born in a Sunni family said for Husain (a s)
    Allah Allah Ba e Bismillah Piser. The Great Sunni Sufi Hazrat Khwajah Moeenuddeen Chishti (alaihirrehmah) Haqqah ke bin’a La Ilahast Husain (a s) And these mushrik kaffir so called musalman are questioning Imam Hasan (a s ) infallibility . Allah’s La’an on them, their parents , their guides and their Heroes.

  3. Though I have replyed twice to the blasphemous acts of questioning the infallability of Hazrat Imam Hasan Alaihissalam, one of the 14 masoom whom Jahil e mutlaq, badaqeeda,kaffir and definitely misguided so called muslims but in reality mushriks questioned his masoomiyat by commiting numeral talaqs.I recieved an article which answers them much comprehensively and I therefore present it as follows: ______________________________________________________________ بقلم: ف۔ح۔مہدوی امام حسن علیہ السلام اور افسانۂ طلاق‏ / تحقیقی مقالہ اشارہ: حال ہی میں بعض نواصب کی جانب سے ایک ایمیل میسج بھیجا گیا جس میں عصمت ائمۂ اہل بیت علیہم السلام کو مخدوش کرنے کے لئے ریحانۃ الرسول (ص) حضرت امام حسن مجتبی علیہ السلام کی ولادت با سعادت کے موقع پر ایسے شبہے کو ہوا دی ہے جو عباسی بادشاہ منصور دوانیقی کے دور سے سرکاری منشیوں اور اور مستوفیوں نے وضع کیا اور ہزاروں بار اس کا جواب دیا گیا لیکن عباسی اور اموی بادشاہتوں اور آج کے زمانے کے برطانیہ، امریکہ اور اسرائیل کی پالیسی یہی رہی ہے کہ تہمتوں اور الزامات کو دہراؤ اور ان کے جواب پر کان مت دھرو حتی کہ تہمتوں کا نشانہ بننے والے شخص، نظام حکومت یا گروہ وغیرہ کے اپنے بہی خواہ بھی اس کی حقانیت میں شک کرنا شروع کردیں” چنانچہ امویوں کے دین کے پیروکار نہ صرف اس موضوع میں بلکہ تمام اعتقادی موضوعات میں تیرہ صدیاں پرانے بہتان دہراتے رہتے ہیں اور پیروان اہل بیت (ع) کی دلآزاری کا کوئی موقع ہاتھ سے نہیں جانے دیتے اور دوسری طرف سے امریکہ اور اسرائیل کے مفادات کے تحفظ کے لئے اتحاد بین المسلمین پر وار کررہے ہیں۔ اس بار جو الزام اچھالا گیا ہے وہ یہ ہے کہ طلاق اللہ کے نزدیک ناپسندیدہ فعل ہے لیکن امام حسن علیہ السلام نے نکاح اور طلاق کے حوالے سے معاذاللہ افراط کا راستہ چنا تھا۔ ہم نے تھوڑی سے تحقیق کی تو پتہ چلا کہ بعض اپنے بھی اس بہتان سے متاثر ہوئے ہیں اور بعض نے تو اس کو امام علیہ السلام کے لئے باعث فخر گردانا ہے اور لکھا ہے کہ آپ (ع) نے 300 شادیاں کی ہیں جبکہ حقیقت میں آپ (ع) کی بائیس یا اکتیس اولادیں ہیں جو اس تشہیری مہم کی دستاویزات سے مغایرت رکھتی ہے۔ بہرحال یہ ایک جعلی روایت ہے جو بعض مسلم مؤرخین نے جان کر یا انجانے میں نقل کی ہے۔ افسوس یہ ہے کہ انھوں نے اس روایت کے بارے میں تحقیق کو ضروری نہیں سمجھا ہے اور اندھادھند انداز سے اسے نقل کرتے رہے ہیں حتی کہ آج اہل بیت (ع) کے دشمنوں نے اسے اہل بیت (ع) کی عدم عصمت کی دستاویز قرار دیا ہے اور یہ جاہل لوگ اتنا بھی نہیں سوچتے کہ جس فعل کی برائی کو یہ سمجھتے ہیں کیا سبط نبی (ص) اس کو سمجھنے سے قاصر تھے؟ یہ ان ہی موضوعات میں سے ہے کہ جاہلوں نے اسے اچھالا اور اسلام دشمن قوتوں نے اسے ہاتھوں ہاتھ لیا جس طرح کہ ان ہی جاہلوں نے اسلامی روایات میں رسول اکرم (ص) کی نسبت بھی ایسے ہی جعلی افسانے شامل کئے جو بعد میں شیطانی آیات جیسی توہین آمیز کتابوں کی صورت میں برآمد ہوئیں اور اسلامیان عالم کی دلآزاری کا سبب بن گئے اور کفار نے بھی انہیں اسلام سے انتقام لینے کا وسیلہ قرار دیا۔ اور اکرم البستانی جیسوں نے بھی ان ہی روایات کا سہارا لے کر اسلام کی خوب خوب بے حرمتی کردی۔ امام حسن علیہ السلام اور تہمت طلاق بعض مؤرخین نے لکھا ہے کہ امام حسن علیہ السلام پے درپے شادیاں کرتے اور طلاق دیا کرتے تھے اور یہ سلسلہ اس حد تک جاری رہا کہ کہ امیرالمؤمنین علیہ السلام نے کوفہ کے عوام سے فرمایا: اے اہل کوفہ! اپنے بیٹیاں میرے بیٹے حسن سے مت بیاہو کیونکہ وہ بہت زیادہ طلاق دینے والے ہیں! قبیلۂ ہمدان کے ایک فرد نے اٹھ کر کہا: ہم ان کو بیٹیاں دیں گے چاہیں انہیں رکھ لیں چاہیں انہيں طلاق دیں۔ 1 یہ ایک بے بنیاد بہتان ہے اور اس کا حقیقت سے دور کا تعلق بھی نہیں ہے۔ کیونکہ: 1۔ یہ روایت ریحانۃ الرسول امام حسن مجتبی علیہ السلام کی شان کے خلاف ہے۔ 2۔ یہ روایت اور اس قسم کی دیگر روایات تین ہی راویوں سے نقل ہوئی ہیں اور یہ تینوں غاصب عباسی حکمرانوں کے درباری کاتب یا مؤرخ تھے۔ 3۔ یہ روایات اگر درست ہوتیں تو بنو امیہ کے درباری اسے کیوں بھول گئے تھے اور عباسیوں کے دور میں کیوں سامنے آئیں؟ 4۔ عباسی بادشاہ منصور دوانیقی کے دور میں جب حسنی سادات نے اس کے خلاف تحریک کا آغاز کیا تو امام حسن علیہ السلام کے خلاف زہر افشانی اسی سفاک اور غاصب بادشاہ کے حکم پر ہی شروع ہوئی اور نکاح و طلاق کثیر والی روایات بھی اسی سازش کے تحت وضع کی گئیں اور مقصد حسنیوں کی تحریک کو نقصان پہنچانا تھا۔ ابتداء میں ہم روایات اور تاریخی نقل کے سلسلے میں تحقیق کرتے ہیں اور اس کے بعد اس باعث شرم بہتان کا جواب دیتے ہیں۔ امام حسن مجتبی علیہ السلام کی متعدد شادیوں اور بار بار طلاق کی روایات کو تین گروہوں میں تقسیم کیا جاسکتا ہے: پہلا گروہ: اس گروہ میں وہ روایات نقل ہوئی ہیں جن میں متعدد شادیوں سے منع کیا گیا ہے اور اس حکم کے دلائل بیان ہوئے ہیں۔ 1۔ برقی نے محاسن نامی کتاب میں امام صادق علیہ السلام سے روایت کی ہے کہ “ایک آدمی امیرالمؤمنین علیہ السلام کی خدمت میں حاضر ہوا اور عرض کیا: میں آپ کی خدمت میں اپنی بیٹی کے بارے میں مشورہ کرنے حاضر ہوا ہوں کیونکہ آپ کے بیٹے امام حسن اور امام حسین (ع) اور آپ کے بھتیجے عبداللہ بن جعفر (رض) اس کا رشتہ لے کر آئے ہیں، امیرالمؤمنین (ع) نے فرمایا: المستشار مؤتمن؛2 جان لو کہ امام حسن بیویوں کو طلاق دیا کرتے ہیں چنانچہ اپنی بیٹی کا رشتہ امام حسین سے کردو کیونکہ یا تماری بیٹی کے لئے بہتر ہے۔3 2۔ محمد بن یعقوب کلینی نے اپنی سند سے عبداللہ بن سنان سے روایت کی ہے کہ امام صادق علیہ السلام نے فرمایا: ایک روز امیرالمؤمنین علیہ السلام کوفہ کے منبر پر رونق افروز ہوئے اور فرمایا: میرے بیٹے حسن کو اپنی بیٹیوں کا رشتہ مت دیا کرو کیونکہ وہ بہت زیادہ طلاق دینے والے ہیں؛ اتنے میں قبیلہ ہمدان میں سے ایک مرد اٹھا اور کہا: ہاں! اللہ کی قسم کہ ہم اپنی بیٹیوں کی شادیاں امام حسن سے کرائیں گے کیونکہ وہ رسول اللہ (ص) اور امیرالمؤمنین (ع) کے فرزند ہیں؛ پس اگر وہ چاہیں تو ہماری بیٹیوں کو رکھ لیں چاہیں تو انہیں طلاق دیں۔4 روایات کا دوسرا گروہ ان روایات میں گویا امیرالمؤمنین علیہ السلام نے امام حسن کی متعدد شادیوں اور بار بار طلاق سے شدید تشویش ظاہر کی ہے: 1۔ بلاذری نے ابو صالح ابوصالح سے روایت کی ہے کہ امیرالمؤمنین علیہ السلام نے فرمایا: حسن نے اتنی شادیاں کیں اور طلاقیں دیں کہ مجھے خوف لاحق ہوا کہ کہیں ان کا یہ عمل ہمارے لئے دشمنیاں پیدا نہ کرے!۔5 2۔ سیوطى نے امیرالمؤمنین علیہ السلام سے روایت کی ہے: حسن علیہ السلام شادیاں کرتے اور طلاق دیتے یہاں تک کہ میں فکرمند ہوا کہ کہیں قبائل اور اقوام کی جانب سے ہمیں کوئی دشمنی نہ پہنچے!۔6 3۔ ابوطالب مکی لکھتا ہے: امیرالمؤمنین علیہ السلام امام حسن علیہ السلام کی شادیوں اور طلاقوں سے پریشان رہتے تھے اور اپنی تقاریر میں فرمایا کرتے تھے: میرے فرزند حسن اپنی بیویوں کو طلاق دیتے ہیں چنانچہ انہیں اپنی بیٹیوں کا رشتہ نہ دیا کریں!۔ 7 4۔ مجلسى محمد بن عطیه سے نقل کرتے ہیں کہ امیرالمؤمنین‏علیہ السلام امام حسن علیہ السلام کی پے درپے شادیوں اور طلاقوں سے پریشان ہوا کرتے تھے اور مطلقہ بہوؤں کے خاندانوں سے شرم و حیا کیا کرتے تھے۔ اور فرمایا کرتے تھے: حسن بہت زیادہ طلاقیں دیا کرتے ہیں چنانچہ انہيں رشتے نہ دیا کریں۔8 اپنی بات: ان روایات کو اگر درست مان لیا جائے تو پہلی بات تو یہ ہے کہ امام حسن علیہ السلام کی شادیوں اور طلاقوں کا مسئلہ جنگ جمل و صفین و نہروان کے برابر اہم مسئلہ بن چکا تھا، معاذ اللہ امیرالمؤمنین علیہ السلام اپنے بیٹی کی نافرمانیوں سے تنگ آچکے تھے اور معاذاللہ ان کی نافرمانی کا حال یہ تھا کہ امیر علیہ السلام ان سے براہ راست بات کرنے کی بجائے لوگوں سے درخواستیں کررہے تھے کہ وہ آپ (ع) کو بیٹے کے رشتوں کا منفی جواب دیا کریں!!! کیا کوئی عقلمند شخص راکب دوش رسول امام حسن مجتبی پر نافرمانی کا الزام لگا سکتا ہے؟ روایات کا تیسرا گروہ‏ اس قسم کی روایات میں امام حسن علیہ السلام کی شادیوں کی تعداد بیان ہوئی ہے گو کہ رسول اللہ (ص) اور آل رسول اللہ کے گھوڑوں، خچروں، گدھوں، اونٹوں، تلواروں، دستاروں اور جوتوں تک کے نام ذکر کرنے والے ان مؤرخین نے آپ (ع) کی بیویوں کے نام اور ان کے خاندانوں کے نام ذکر کرنا ضروری نہیں سمجھے ہیں۔ ان راویوں میں بھی سنیوں کے علاوہ شیعہ راوی بھی موجود ہیں: 1۔ كفعمى نے لکھا ہے کہ آپ (ع) نے چونسٹھ شادیاں تھیں۔9 2۔ ابوالحسن مدائنى کے مطابق آپ کی شادیوں کی تعداد ستر۔ 10 3۔ ابن حجر کے مطابق نوے۔ 11 4۔ كلینى کے مطابق پچاس۔12 5۔ بلخى کے مطابق دوسو۔13 6۔ ابوطالب مكى کے مطابق دوسوپچاس۔14 7۔ بعض دیگر نے امام حسن علیہ السلام کی شادیوں کی تعداد بڑھا کر 300 بھی بتائی ہے۔15 8۔ بعض نے کہا ہے کہ امام (ع) نے 400 تک شادیاں کی تھیں۔16 ہمارا جواب ستم ظریفی تو یہ ہے کہ یہ روایات اپنوں اور پرایوں نے امام حسن مجتبی علیہ السلام کے بارے میں بیان کی ہیں اور اگرچہ شیعہ راویوں اور بعض غیر شیعہ راویوں نے یقینی طور پر بدنیتی سے یہ روایات نقل نہیں کی ہیں لیکن نتیجہ وہی ہوا ہے جو دشمن چاہتا تھا اور آج اہل بیت (ع) کے دشمن ان ہی روایات کو دستاویز بنا کر حریم اہل بیت (ع) پر یلغار کررہے ہیں۔ پیغمبر صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم نے امامین حسنین علیہما السلام کے بارے میں فرمایا: قال رسول الله (ص): الحسن و الحسین سبطان من الاسباط۔ 17 حسن اور حسین اسباط میں سے دو سبط ہیں۔ قال رسول الله (ص): الحسن و الحسین سیدا الشباب اهل الجنة۔18 حسن اور حسن جوانان جنت کے دو آقا اور دو سرور و سردار ہیں ۔ قال رسول اللہ (ص) لفاطمۃ الزہراء (س) یا حبیبتی ۔۔۔ و منا سبطا هذه الامة و هما ابناک الحسن و الحسین و هما سیدا شباب أهل الجنة و أبوهما و الذی بعثنی بالحق خیر منها۔ 19 اے میری پیاری بیٹی! اور ہم میں سے ہی ہیں دو سبط جو آپ کے بیٹے حسن و حسین ہیں جو جوانان جنت کے سردار ہیں اور ان کے باپ ـ اس خدا کی قسم جس نے مجھے نبوت پر مبعوث فرمایا ـ ان دو سے افضل ہیں۔ قال رسول الله (ص): احب اهل‏بیتی الی الحسن و الحسین۔20 میری اہل بیت اور میرے خاندان میں میں حسن و حسین (ع) سے سب سے زیادہ محبت کرتا ہوں۔ قال رسول الله (ص): من احبهما فقد احبنی و من ابغضهما فقد ابغضنی۔21 جس نے امام حسن حسن اور امام حسین (ع) سے محبت کی میں اس سے محبت کرتا ہوں اور جس نے ان دو سے دشمنی کی میں اس کو اپنا دشمن سمجھتا ہوں۔ قال رسول الله (ص): الحسن و الحسین ابنای من احبهما احبنی و من احبنی احبه الله و من احبه الله ادخله الجنة۔22 حسن اور حسین میرے دو بیٹے ہیں جو ان سے محبت رکھے وہ مجھ سے محبت رکھتا ہے اور جو مجھ سے محبت کرے اللہ اس سے محبت کرتا اور اس کو جنت میں داخل کرتا ہے۔ قال رسول الله (ص) للحسن و الحسین: انتما امامان ولامکما الشفاعة، و قال من احبنی و احب هذین و اباهما و امهما کان معی فی درجتی فی الجنة یوم القیامة۔23 آپ (ص) نے امامین حسنین (ع) سے مخاطب ہوکر فرمایا: آپ دونوں پیشوا اور امام ہیں اور شفاعت آپ دونوي کی والدہ ماجدہ (سیدہ بنت الرسول (ص)) کے لئے مخصوص ہے۔ نیز فرمایا: جو شخص ان دو اور ان کے والد اور والدہ کو دوست رکھے وہ قیامت کے روز جنت میں میرے ساتھ اور میرے رتبے میں ہوگا۔ ان احادیث کا ذکر اس لئے ضروری نظر آیا کہ موضوع بہت دشوار ہے اور قابل برداشت نہیں ہے کہ کوئی اہل بیت (ع) کو ایسی نسبتیں دیں جو وہ اپنے عام سے بچوں کو دینا پسند نہیں کرتے جبکہ یہاں قطب عالم امکان امام حسن ریحانۃ الرسول (ص) کو انھوں نے ایک ساتھ کئی الزامات دیئے ہیں تا کہ ان کو اپنے بعض پسندیدگان کے رتبے تک پہنچاسکیں کیونکہ اہل بیت کے برابر ہونا تو ممکن نہیں چنانچہ ان کا رتبہ ہی گرادیا جاتا ہے۔ امیرالمؤمنین علیہ السلام فرماتے ہیں: نحن أهل البيت لا يقاس بنا أحد۔ 24 ہم اہل بیت سے کسی کا بھی قیاس نہیں کیا جاسکتا (کبھی بھی کسی کے بارے میں نہیں کہا جاسکتا کہ فلان شخص اہل بیت رسول کی مانند ہے)۔ اور پھر وہی امام علی علیہ السلام فرماتے ہیں: زمانے کے لوگوں نے میرا رتبہ گرایا پھر گرایا اور پھر گرایا حتی کہ کہنے لگے “علی اور معاویہ!” یہاں بھی بعض دوسروں کو امام حسن کے برابر لانا مشکل ہوتا ہے تو بادشاہ وقت حکم دیتا ہے “گرادو امام حسن کا رتبہ حتی کہ وہ میرے برابر ہوجا‏ئیں تو اب کوئی بات نہیں ملتی تو شادیوں والا افسانہ گڑھ لیا جاتا ہے۔ چنانچہ ہم نے اپنے مجروح دل کو دلاسا دینے کے لئے ان احادیث کا سہارا لیا آخر حسنین کریمین حضرت ذوالجلال کا آ‏ئینۂ جلال و جمال ہیں؛ دین کے محافظ، اسلام کو زندہ کرنے والے اور احکام قرآن کی بقاء کی ضمانت دینے والے ہیں؛ دونوں نے دین کے تحفظ کی خاطر ابوسفیان کے بیٹے اور پوتے کے ہاتھوں جام شہادت نوش کیا ہے؛ اور دونوں نے دین کی حفاظت کے لئے مشیت الہیہ پر عمل کیا؛ وہ معصوم ہیں اور حضرت سیدہ فاطمہ زہراء سلام اللہ علیہا فرماتی ہیں: “ما یشاءون الا ان یشاء الله”25 اہل بیت (ع) کوئی کام نہیں چاہتے سوائے اس کے جو اللہ نے چاہا ہو بالفاظ دیگر وہ وہی چاہتے ہیں جو اللہ نے چاہا ہو۔ اب ہم بحث کی طرف لوٹتے ہیں: یہ روایات امام حسن مجتبی (ع) کی شان و شخصیت کے منافی ہیں جس طرح کہ اس سے پہلے بھی اشارہ ہوا یہ عمل امام حسن مجتبی علیہ السلام کے مقام و شخصیت سے سازگار نہیں ہے کیونکہ امام حسن علیہ السلام کی شخصیت کی جو تصویر کشی قرآن اور نبی اکرم (ص) اور ائمہ معصومین (ع) کی احادیث سے ہوئی ہے وہ ان روایات سے تناسب نہیں رکھتیں جو یہاں نقل ہوئی ہیں۔ اللہ تعالی قرآن مجید میں امام حسن علیہ السلام سمیت دیگر اصحاب کساء سے مخاطب ہوکر ارشاد فرماتا ہے: (اِنَّمَا یُرِیدُ اﷲُ لِیُذْہِبَ عاَنْکُمْ الرِّجْسَ اَہْلَ الْبَیْتِ وَیُطَہِّرَکُمْ تَطْہِیرًا۔ 26 ”(پیغمبر کے) گھر والو!اﷲ تعالیٰ صرف یہ چاہتا ہے کہ تم سے (ہر طرح کی) گندگی (ناپاکی) دور کرے اور تم کو خوب ستھرا و پاک صاف بنادے۔” آیت مودت میں فرماتا ہے: “قل لا أسألكم عليه أجراً إلا المودة في القربى”۔27 اے میرے رسول (ص)! کہہ دو کہ میں تم (امتیوں) سے اپنی رسالت پر کوئی اجر نہیں مانگتا سوائے اس کے کہ میرے اہل بیت (ع) سے محبت و مودت رکھو۔ اور ہم تمام سنی اور شیعہ راویوں نے کہا ہے کہ رسول اللہ کی آل اور اہل میں امام علی، حضرت سیدہ فاطمہ، امام حسن، امام حسین اور امام حسین کی نسل سے آنے والے نو ائمہ علیہم السلام شامل ہیں۔ فَقُلْ تَعَالَوْا نَدْعُ أَبْنَاءَنَا وَأَبْنَاءَكُمْ وَنِسَاءَنَا وَنِسَاءَكُمْ وَأَنْفُسَنَا وَأَنْفُسَكُمْ ثُمَّ نَبْتَهِلْ فَنَجْعَلْ لَعْنَةَ اللَّهِ عَلَى الْكَاذِبِينَ )28 اور تم کو حقیقت الحال تو معلوم ہو ہی چلی ہے تو ان سے کہنا کہ آؤ ہم اپنے بیٹوں اور عورتوں کو بلائیں تم اپنے بیٹوں اور عورتوں کو بلاؤ اور ہم خود بھی آئیں اور تم خود بھی آؤ پھر دونوں فریق (خدا سے) دعا والتجا کریں اور جھوٹوں پر خدا کی لعنت بھیجیں۔ یہ ثابت کرنے کے لئے سند و ثبوت کی ضرورت نہیں ہے کہ آیت مباہلہ بھی آیت تطہیر اور آیت مودت کی طرح اہل بیت علیہم السلام کی شان میں آئی ہے اور اس آیت میں ابنائنا سے مراد امام حسن اور امام حسین (ع) ہیں۔ ابن كثیر دمشقى لکھتا ہے: امیرالمؤمنین‏علیہ السلام اپنے بیٹے امام حسن علیہ السلام کا بہت ہی احترام اور تعظیم کیا کرتے تھے۔29 امام حسین‏علیہ السلام اپنے بھائی امام حسن علیہ السلام کے لئے اتنے احترام و تعظیم کے قائل تھے کہ کبھی اپنے بڑے بھائی کی موجودگی میں بات نہیں کرتے تھے۔30 طواف کی حالت میں لوگ اس طرح امام حسن اور امام حسین علیہ السلام کی طرح ہجوم کیا کرتے تھے کہ کبھی تو ان کے کچلے جانے کا خطرہ پیدا ہوجایا کرتا تھا۔ 31 کبھی امام حسن علیہ السلام اپنے گھر کے دروازے پر تشریف لاکر بیٹھ جاتے تھے اور جب تک وہاں رہتے آپ (ع) کی ہیبت کی وجہ سے لوگوں کا آپ (ع) کے گھر پر آنا جانا بند رہتا تھا۔ 32 امام حسن علیہ السلام کے معنوی اور روحانی حالات میں منقول ہے کہ: حالت وضو میں آپ (ع) کے چہرہ منور کا رنگ دگرگوں ہوجاتا تھا اور پوچھنے والوں کے جواب میں فرمایا کرتے تھے: «حقّ على كلّ من وقف بین یدى ربّ العرش ان یصفر لونه و یرتعد فرائصه»۔ 33 یہ ان پر سب کے حق ہے جو رب عرش کے سامنے کھڑے ہونے جاتے ہیں کہ ان کا چہرہ پیلا پڑجائے اور وہ لرزہ بر اندام ہوجائے۔ اب ہم پوچھتے ہیں کہ: 1۔ جو امام معصوم خالق یکتا کے حضور اس طرح لرزہ بر اندام ہو کر حاضر ہوتے ہیں وہ خدا کو چار سو مرتبہ کیونکر ناراض کرسکتے ہیں اور طلاق کا عمل اتنی مرتبہ کیونکر انجام دے سکتا ہے جو حلال اعمال میں سب سے مغضوب ترین عمل ہے؟ 2۔ اگر بفرض محال یہ روایات درست ہوں تو یہ شادیوں اور طلاقوں سے متعلق روایات اس زمانے میں سے تعلق رکھتی ہیں جب امیرالمؤمنین علیہ السلام کوفہ میں تھے اور مسلمانوں کی ظاہری خلافت بھی آپ (ع) کے اختیار میں تھی اور اگر ہم جنگ جمل (میں ناکثین یا عہدشکنوں کے فتنے و بغاوت)، جنگ صفین میں قاسطین (حق سے روگردانی کرنے والے گمراہوں کی بغاوت اور فتنے، اور جنگ نہروان میں مارقین (یعنی دین سے خارج ہونے والوں) کی بغاوت اور فتنے کے ایام کو امیرالمؤمنین (ع) کی مدت حکومت سے کم کردیں تو کچھ ہی مہینے باقی رہ جاتے ہیں اور اگر ان فتنوں کے مقدمات و مؤخرات کو بھی شمار کریں تو دوسری اور تیسری شادی کے بارے میں سوچنے کا وقت بھی نہیں ملتا اور چنانچہ یہ دعوی عقلی لحاظ سے بھی مکمل طور پر باطل ہے۔ اگر ہم ہر شادی سے طلاق تک کی مدت کو ملحوظ رکھیں اور اس بات کو بھی مد نظر رکھیں کہ حجاز پر مسلط سعودی وہابی بادشاہوں کی روایت کے برعکس (جو سو تک شادیاں ایک ہی آن میں کرنا جائز سمجھتے ہيں اور اتنی ہی بیویوں کو ایک ہی آن میں اپنی حرمسراؤں میں رکھتے ہیں اور توحید و دینداری کے مدعی وہابی مفتی شریعت وہابیہ کے مطابق انہیں ایسا کرنے کے حوالے سے مجاز سمجھتے ہیں)، شریعت محمدیہ (ص) کے مطابق ایک ہی وقت چار سے زائد زوجات رکھنے کی اجازت رسول اللہ (ص) کے سوا کسی کو بھی نہیں ہے تو ایسی صورت میں ہر نئی شادی کے لئے ایک زوجہ کو طلاق دینی پڑے گی تو یہ ساری شرائط مد نظر رکھ کر معلوم ہوتا ہے کہ یہ الزامات نہایت مضحکہ خیز ہیں اور ان الزامات سے ان کے بانی یعنی منصور دوانیقی اور اس کے منشیوں اور مستوفیوں کی کم علمی ظاہر ہوتی ہے۔ 3۔ کیا امیرالمؤمنین علیہ السلام کی نہی نہی عن المنکر تھی یا نہی عن الحلال تھی؟ دونوں صورتوں میں غلط ہے کیوں؟ اس لئے کہ: امیرالمؤمنین اور امام حسن علیہماالسلام آیت تطہیر کی گواہی کے مطابق معصوم تھے اور دونوں کو ہر گونہ رجس سے پاک کردیا گیا تھا چنانچہ ان میں سے کوئی بھی ایسا فعل کرنہیں سکتا جس سے انہیں نہی کیا جاسکے اور نہی عن الحلال بھی تو بنیادی طور پر غلط ہے اور امام معصوم نہی عن الحلال جیسے فعل قبیح کے مرتکب نہیں ہوسکتے۔ 4۔ کیا امیرالمؤمنین علیہ السلام کی نہی مقدمے پر مبنی تھی یا پھر مقدمے کے بغیر تھی؟ یعنی یہ کہ کیا آپ (ع) نے ابتداء میں آپ نے اپنے فرزند سے فرمایا تھا کہ ان کے ان افعال سے ناراض ہیں یا نہیں بلکہ براہ راست معاشرے میں جاکر اپنے بیٹے کی شکایت عوام تک پہنچائی ہے؟ اگر تمہید و مقدمے کے بشیر ہو تو یا عمل تو بنیادی طور پر امیرالمؤمنین (ع) سے بعید اور آپ (ع) کی روش کے منافی ہے اور محال ہے کہ آپ (ع) کسی تمہید کے بغیر اپنے فرزند ارجمند اور وہ بھی امام حسن (ع) جیسے بیٹے کی آبرو نیلام کردیں۔ اور اگر تمہید پر مبنی تھی تو امام حسن سے تو کیا ایک عام سے باایمان انسان سے بھی بعید ہے کہ وہ امیرالمؤمنین (ع) جیسے والد اور امام کو اتنا تنگ کرے اور اتنا پریشان کرے کہ وہ دلتنگ اور پریشان رہا کریں۔ 5۔ میں ایمیل بھیج کر یا کتابوں یا ویب سائٹوں پر لکھ کر امام حسن مجتبی علیہ السلام پر طعن کرنے والے شخص یا اشخاص سے پوچھنا چاہوں گا کہ کیا وہ اپنے آپ کو باور کراسکتا/سکتے ہیں کہ امام حسن علیہ السلام اتنی بڑی شان و منزلت کے باوجود اپنے والد کے لئے شرم و حیا اور شرمندگی اور خجلت کے اسباب فراہم کرسکتے تھے؟! کیا امام حسن اور امام حسین اور ان کے والد سے منسوب کسی مبینہ پیر، قلندر، مولوی اور مفتی سے وہ ایسی توقع کرسکتے ہیں کہ وہ امام اور اسلام اور خدا کی اس طرح نافرمانی کرسکتے ہیں اور اس طرح اپنے امام اور اپنے باپ کی نافرمانی کرسکتے ہیں؟؟! کیا اپنے ان ہی عام رشتہ داروں یا بیٹوں اور بھائیوں سے توقع رکھ سکتے ہیں کہ وہ علاقے کی قوموں اور قبیلوں میں آپ کے لئے دشمنیاں ابھاریں کہ اگر ایسا کریں تو آپ ان پر دین سے دوری ہی کا نہیں بلکہ عقل سے محرومی تک کا الزام لگائیں گے؟! الف: ابن عساکر کی روایت میں یہ دینی سقم اور نفسیاتی مشکل بخوبی واضح ہے: ابن عساکر سوید بن غفله سے نقل کرتے ہیں: امام حسن (ع) کی ایک زوجہ قبیلہ خثعم سے تھیں جنہوں نے امیرالمؤمنین علیہ السلام کی شہادت کے بعد امام حسن (ع) کے ہاتھ پر بیعت کی اور آپ (ع) کو خلافت سنبھالنے پر مبارکباد دی چنانچہ امام (ع) نے ان سے فرمایا: تم نے امیرالمؤمنین (ع) کی شہادت پر اپنی خوشی اور شماتت کا اظہار کردیا “”چنانچہ میں نے تمہیں تین طلاقیں دے دیں!!!!!؟”” اس خاتون نے کہا: خدا کی قسم میری بات کا مطلب یہ نہیں تھا۔ بہر حال یہ خاتون عدت کے ایام کے خاتمے پر آپ (ع) کے گھر سے خارج ہوگئیں!!!؟؟ امام (ع) نے رقم مہر کے ساتھ بیس ہزار درہم ملا کر ان کے لئے روانہ کردیئے تو خاتون نے کہا کہ یہ بہت ناچيز متاع ہے جو جدا ہونے والے دوست سے مجھے مل رہی ہے۔ خاتون کی بات امام (ع) تک پہنچتی ہے تو آپ بہت روتے ہیں اور فرماتے ہیں: اگر میں نے اپنے والد اور اپنے نانا سے نہ سنا ہوتا کہ “جب کوئی اپنی بیوی کو ایک ساتھ تین ‍طلاقیں دیدے جب تک اس عورت نے نیا شوہر اختیار نہ کیا ہو پہلے شوہر پر حلال نہیں ہوسکے گی، تو میں رجوع کرتا۔ 34 اس من گھڑت افسانے کی جعلی پن کا پہلا ثبوت یہ ہے کہ: 1۔ امام حسن علیہ السلام کسی بھی تمہید کے بغیر اور اس خاتون کے مقصد کو توجہ دیئے بغیر صرف خلافت کا عہدہ سنبھالنے پر مبارکباد کہنے کی پاداش میں اتنا سخت غصے ہوجاتے ہیں اور آپے سے باہر ہوجاتے ہیں کہ اپنی عزیز زوجہ کو طلاق دیدیتے ہیں جن کے درمیان محبت کا ناطہ ابن عساکر کی روایت سے ظاہر ہے۔ ایک عقلمند انسان سے ـ معصوم نہ بھی ہو ـ ایسی حرکت کی توقع نہیں رکھی جاسکتی چہ جائیکہ امام حسن علیہ السلام سے ایسی حرکت سرزد ہوجائے۔ 2۔ فقہ اہل بیت (ع) کے مطابق طلاق دو عادل گواہوں کے سامنے ہونی چاہئے جبکہ ابن عساکر کی روایت کے مطابق اس شرط کو ملحوظ نہیں رکھا گیا ہے! فقہ اہل بیت بھی امام علی، امام حسن، امام حسین اور دوسرے اماموں سے آئی ہے اب سوال یہ ہے کہ یہ کیونکر ممکن ہے کہ امام معصوم اپنے ہی احکام اور اپنی ہی فقہ کی خلاف ورزی کرے؟ 3۔ معلوم نہیں کہ یہ طلاق ہوئی بھی ہے یا نہیں؟ امام حسن علیہ السلام کی خثعمی زوجہ تھیں بھی یا نہیں تھیں؟ بہرحال اگر امام حسن علیہ السلام نے اپنی زوجہ کو اپنے والد اور امام کی شہادت پر خوش ہونے کی پاداش میں طلاق دی تھی تو حق مہر تو دینا چاہئے تھا لیکن یہ بیس ہزار درہم کا اضافہ کس لئے تھا۔ اور ہاں! اس روایت میں ابن عساکر کی اموی پرستی کا عنصر بھی تھوڑا تھوڑا عیاں ہوا ہے اور وہ یوں کہ اس نے امام حسن علیہ السلام کو معاذاللہ جلدباز انسان کے طور پر متعارف کرایا ہے جو بات بے بات پر آپے سے باہر ہوجاتے ہیں؛ پھر زوجہ کی زبان سے امام حسن (ع) کو ابن عساکر کی جانب سے کہا گیا ہے کہ “خدا کی قسم میرا مطلب یہ نہیں تھا: پھر تین طلاقوں کا الو سیدھا کرنے کے لئے انہیں امام حسن اور اہل بیت (ع) سے بھی منسوب کیا جاتا ہے؛ اور پھر امام حسن (ع) پر عدم ثابت قدمی کا الزام دھرتے ہوئے انہیں سابقہ زوجہ کو 20 ہزار درہم بھجواتے ہوئے دکھاتا ہے اور سابقہ زوجہ کی طرف سے پھر بھی امام حسن کو محبت بھرا پیغام بھجواتا ہے جس پر امام حسن (ع) نادم و پشیمان ہوتے ہيں اور رونے لگتے ہیں اور “تین طلاقوں کے ‍قانون” کے استحکام پر مہر تصدیق ثبت کرتے ہوئے اپنی پیاری زوجہ کو اس قانون پر قربان کرتے ہوئے دکھاتا ہے؟!! 4۔ تین طلاقوں والا قانون جس کے تحت ایک ہی مجلس میں بیوی کو تین طلاقیں دی جاسکتی ہیں، مذہب اہل بیت (ع) سے دور دور کا تعلق بھی نہیں رکھتا اور یہ طلاق رسول اللہ (ص) کے زمانے میں نہیں تھی اور اگر کوئی ایک ہی نشست میں تین طلاقیں دیتا تو وہ ایک طلاق سمجھی جاتی تھی اور ابوبکر کے زمانے یہی درست شرعی قانون نافذ رہا جو اہل بیت (ع) کے مذہب میں آج تک نافذ ہے اور دوسرے خلیفہ کے دور کے ابتدائی دو برسوں تک بھی نافذ رہا جس کے بعد دوسرے خلیفہ نے شرعی قوانین میں تبدیلی ضمن میں اس قانون کو بھی تبدیل کیا اور تین طلاقیں ایک ہی مجلس میں دی جانی لگیں گو کہ مصر میں یہ ‍قانون منسوخ ہوگیا ہے اور شیعہ قانون طلاق رائج ہے جو وہی بنیادی اسلامی قانون ہے۔35 چنانچہ ائمہ اہل بیت (ع) سے اس نئے قانون کی نسبت دینا مضحکہ خیزی کی انتہا ہے۔ چنانچہ فقہ اہل بیت (ع) کے تحت ایک ہی مجلس میں سو بار طلاق بھی ایک ہی طلاق سمجھی جاتی ہے اور مرد طلاق کے بعد عدت کے ایام میں بیوی سے رجوع کرسکتا ہے یا پھر عدت کی مدت ختم ہونے کے بعد اس کے ساتھ نکاح کرسکتا ہے لہذا اگر ابن عساکر کا یہ افسانہ درست بھی مان لیا جائے تو امام (ع) کے پاس عدت کے دنوں میں رجوع یا عدت کے بعد نکاح کا امکان موجود تھا جو اگر ہمیں معلوم ہے تو امام (ع) کو بطریق اولی معلوم تھا چنانچہ رونے دھونے اور نادم ہونے کی ضرورت ہی نہیں تھی۔ اور ہاں! تین طلاقیں رسول خدا (ص) کے حکم کے مطابق کچھ یوں ہیں کہ مرد اپنی بیوی کو طلاق دیتا ہے اور رجوع کرتا ہے، پھر طلاق دے کر رجوع کرتا ہے اور تیسری مرتبہ طلا‍ق دیتا ہے تو اس کے بعد اس سے رجوع نہیں کرسکتا حتی کہ کوئی اور شخص اس سے شادی کرلے اور اگر اس نے اس کو طلاق دی تو پہلا شوہر اس سے نکاح کرسکے گا اور یہ عمل تین مرتبہ جاری رہ سکتا ہے جس کے بعد وہ عورت اس پر حرام ہوجاتی ہے۔ ابن عساکرکی روایت کی صورت حال اتنی مضطرب ہے اور اس پر اتنے اعتراضات وارد ہیں کہ اس کی سند کا جائزہ لینے کی ضرورت ہی نہیں ہے۔ ب۔ اسناد کا جائزہ 1۔ اکثر مؤرخین نے اس تاریخی واقعے کو سند و ثبوت ذکر کئے بغیر نقل کیا ہے اور اس کو “ابوالحسن مدائنى”، “محمد بن عمر واقدى” اور “ابوطالب مكّى”۔ دونوں صورتوں میں قابل جرح اور حامل اشکال ہے کیونکہ: ابن عساکر لکھتا ہے: و روى‏ محمد بن سیرین ۔۔۔ اور محمد بن سیرین نے روایت کی ہے کہ۔۔۔36؛ میرخواند شافعى لکھتا ہے: “نقل است كه۔۔۔ نقل ہے کہ ۔۔۔” 37؛ سیوطى کہتا ہے کہ: “كان الحسن یتزوج۔۔۔ امام حسن (ع) شادیاں کرتی تھے۔۔۔”۔38 “ابوطالب مكّى لکھتا ہے: “انّه تزوّج۔۔۔ بتحقیق کے اس نے شادی کی۔۔۔”39؛ “سبط بن الجوزى نے لکھا ہے: “و فى روایة انّه تزوّج۔۔۔ اور روایت ہے کہ بتحقیق انھوں نے شادی کی۔۔۔”40؛ ابوالحسن مدائنى نے لکھا ہے: “كان الحسن كثیرالتزویج۔۔۔ حسن (ع) کثیرالتزویج تھے۔۔۔”۔41 یہ تمام روایتیں مرسل ہیں اور ان کا سلسلۂ سند ذکر نہیں ہوا ہے۔ اور جن لوگوں نے ان تین مؤرخین پر اعتماد کیا ہے ان سے بس یہی کہنا چاہئے کہ: یہ تینوں مؤرخین بھی امام حسن علیہ السلام کے زمانے میں نہ تھے اور ان تینوں نے بھی تمہاری طرح یہ روایتیں سلسلہ سند ذکر کئے بغیر نقل کی ہیں جس طرح کے ہم نے مدائنى اور مكّى سے نقل کیا چنانچہ ہم یہاں کہتے ہیں کہ اس طرح کے ناقابل اعتماد راویوں کی بے اعتمادی اور بے ثبوتی کو دیکھ کر اعلان کیا جاتا ہے کہ ان لوگوں کی طرف سے امام حسن علیہ السلام کی شادیوں، زوجات کی تعداد، طلاقوں، تزویج و طلاق وغیرہ وغیرہ کے بارے میں منقولہ ہر قسم کی روایات جھوٹی اور بے بنیاد ہیں۔ 2۔ ارباب جرح و تعدیل میں سے بہت سوں نے ان تین راویوں کو کلی طور پر ناقابل اعتماد و اعتبار قرار دیا ہے۔ جن لوگوں نے ان افراد کو ناقابل استناد و اعتماد قرار دیا ہے ان میں الذہبى،42، العسقلانى‏43، ابن الجوزى‏44، عماد الحنبلى‏45، الرازى‏46، ابن الاثیر الجزرى‏47، زركلى‏48، علامه امینى‏49، سیدمحسن الامین‏50، هاشم معروف الحسنى‏51 وغیرہ کی طرف اشارہ کیا جاسکتا ہے۔ 3۔ ان تین مؤرخین نے ایسے راویوں سے روایت کی یعنی ایسے استادوں کے شاگرد تھے جو یا تو بنو امیہ کے پیروکار تھے یا بالکل مجہول اور ضعیف تھے؛ مثلاً مدائنی عَوانة بن حَکَم کلبی سے نقل روایت کرتا ہے جبکہ عوانہ معاویہ اور بنی امیہ کی سوانح لکھنے اور ان کے فائدے میں وضع حدیث کا ملزم ہے اور اس کی روایات بہر کیف بنوامیہ کی جانب رجحان رکھتی ہیں۔ 52 اور اس کے بعض مشائخ اور اساتذہ منجملہ جعفر بن ہلال‏53، عاصم بن سلیمان احول‏54 و ابن عثمان‏55، ضعیف یا مجہول ہیں۔ یحیی بن معین کہتے ہیں کہ واقدی جو روایات مدنیوں سے نقل کرتے ہیں ان میں مجہول رواة کی بھرمار ہے۔ 56 ہاشم معروف الحسنى لکھتے ہیں: مدائنى، عباسی بادشاہوں کا معاصر تھا اور اس پر دروغگوئی اور جعل حدیث کا الزام ہے۔ ذہبی نے میزان الاعتدال میں لکھا ہے کہ مسلم بن حجاج قشیری نے اپنی صحیح میں مدائنی سے روایت نقل کرنے سے اجتناب کیا ہے اور ابن عدی نے اس کو ضعیف گردانا ہے اور اصمعی نے اس سے کہا ہے: اللہ کی قسم! اسلام میں سے کچھ بھی تیرے وجود میں باقی نہیں بچا ہے۔۔۔ لسان المیزان کے مصنف نے اس کے بارے میں کہا ہے: وہ عبدالرحمن بن سمرہ بن حیبب اموی کے غلاموں میں سے تھا اور دوسری طرف سے اس کی بیشتر روایات مرسل ہیں جن کا کوئی سلسلۂ سند موجود نہیں ہے۔ ان سب حقائق کو مدنظر رکھتے ہوئے یہ حقیقت سامنے آتی ہے کہ 70 شادیوں والی روایت جو مدائنی کے سوا کسی نے نقل نہیں کی ہے اس زمانے کی حکمرانوں کی جعلیات میں سے ایک ہے اور اس کا حقیقت سے دور کا بھی تعلق نہیں ہے۔ وہی جو علویوں اور آل رسول اللہ (ص) کے دشمن تھے یہ روایتیں وضع کرلیا کرتے تھے اور یہ بات بھی مسلمات تاریخ میں سے ہے۔۔۔57 شیخ محمد بن یعقوب کلینی کی روایت ـ جو روایات کے پہلے گروہ میں ذکر ہوئی ہے ـ کی سند میں حمید بن زیاد اور حسن بن محمد سماعہ دکھائی دیتے ہیں جو واقفی ہیں۔ 58 علامہ حلّى حمید بن زیاد کے بارے میں کہتے ہیں کہ “میرے نزدیک اس کی روایت اس وقت قابل قبول ہے کہ اس روایت کی کوئی معارض (متصادم) روایت موجود نہ ہو۔ 59 علامہ مجلسی نے اس روایت کو معتبر قرار دیتے ہوئے اس کی یوں توجیہ کی ہے کہ: شاید امیرالمؤمنین (ع) کا مطلب یہ تھا کہ آپ (ع) لوگوں کے ایمان کے مراتب آزمانا چاہتے تھے نہ یہ اللہ کی بارگاہ میں تأئید پانے والے معصوم فرزند کی ملامت کرنا چاہتے تھے۔60 لیکن ان کی روایت کے بعض راوی واقفی ہیں (جو امام کاظم علیہ السلام کی شہادت کے بعد توقف کا شکار ہوئے اور امام رضا علیہ السلام کی امامت کے منکر ہوئے) لہذا علامہ حلی کے موقف کے مطابق ان کی روایت صرف اسی صورت میں قابل قبول ہے کہ اس سے متصادم روایت وارد نہ ہوئی ہے، چنانچہ یہ روایت حجت نہیں ہے اور پھر امام حسن مجتبی علیہ السلام کی عصمت، عظمت اور مقام و منزلت پر مبنی بے شمار روایات اس روایت سے متصادم ہیں جن کی وجہ سے علامہ حلی کے قاعدے کے مطابق اس روایت کی حجیت خود بخود ختم ہوجاتی ہے۔ روایات کے تیسرے گروہ میں الکافی کی روایت قرار پائی ہے جو ابوالعلاء سے نقل ہوئی ہے اور علامہ مجلسی اس روایت کو مجہول سمجھتے ہیں۔61 روایات کے پہلے گروہ میں مندرج برقی کی روایت ہے جو اس نے محاسن نامی کتاب میں احمد بن ابی عبداللہ سے نقل کی ہے اور اس کا جواب بھی یہ ہے کہ اگرچہ احمد بن ابى‏عبداللہ خود قابل توثیق و تأئید ہیں لیکن ان کی روایات قابل اعتماد نہیں ہیں کیونکہ انھوں نے اکثر روایات ضعیف راویوں سے نقل کی ہیں۔62 اپنی بات: حدیث و روایت سے استناد کا مسئلہ بھی بہت حساس مسئلہ ہے جو ہر آدمی کا کام نہیں ہے اور اس کے لئے علم حدیث اور علم رجال کا ہونا ضروری ہوتا ہے اور اگر انسان جرح و تعدیل کے قواعد سے آگہی نہ رکھتا ہو اس کو حدیث سے کو حکم اخذ کرنے اور اس سے استنباط و اجتہاد کرنے میں احتیاط کرنی چاہئے۔ اسی طرح مراجع تقلید کے فتاوی بھی ہیں جن کو جذبات و احساسات کے ترازو میں پرکھنے سے اجتناب کرنا چاہئے کیونکہ مراجع قرآن و حدیث سے حکم کا استباط کرتے ہیں اور شریعت کے احکام اخذ کرتے ہیں جن کا جذبات سے کوئی تعلق نہیں ہے اور ہم بھی صرف اس لئے مسلمان ہیں کہ شریعت محمدی (ص) کے تابع ہیں اور جذبات کی متابعت سے مسلمانی کی ضمانت نہیں دی جاسکتی جس طرح کہ احادیث کو بھی اپنے جذبات کی ترجمانی کے لئے پیش کرنے سے گمراہی یقینی ہوجاتی ہے۔ دیکھیں جب ڈاکٹر ہمیں نسخہ دیتا ہے تو ہم اس میں چوں و چرا کئے بغیر اس پر عمل کرتے ہیں تو دین کے سلسلے میں ہمیں مراجع کی بات اور اہل بیت کی احادیث میں مداخلت کیوں کرتے ہیں؟ کیا ہمیں یہ حق حاصل ہے؟ ہم جب جسمانی صحت کے حوالے سے ڈاکٹر پر اعتماد کرتے ہيں تو اپنے دین کے سلسلے میں حدیث و قرآن کے متخصصین پر اعتماد کرنے کیوں سرتابی کرتے ہیں۔ اس شبہے کا بانی کون ہے؟‏ موجودہ دلائل اور شواہد سے بخوبی معلوم ہوتا ہے کہ عباسی بادشاہ منصور دوانیقی کے دور میں حسنی سادات کی عباسی مخالف تحریک شروع ہونے سے پہلے کسی بھی کتاب میں یہ روایت نقل نہیں ہوئی ہیں اور منصور عباسی ہی تھا جس نے علویوں کی تحریک اور امام حسن مجتبی کے پوتوں کے حکومت مخالف اقدامات کو بے اثر کرنے کے لئے یہ تہمت ابلیس کی مدد سے گڑھ لی اور فرزند رسول (ص) امام حسن مجتبی کے خلاف اس شبہے کی بنیاد رکھی جو آج اہل بیت (ع) کے دشمنوں کے ہاتھوں میں دستاویز بنی ہوئی ہے۔ منصور علویوں اور حسنیوں کی تحریک سے سخت خوفزدہ تھا اس نے اور اس کے پاس اپنی تشویش کے خاتمے کے لئے اس سے زیادہ بہتر حربہ نہیں تھا کہ امام حسن علیہ السلام کا پاک اور معصوم چہرہ اپنی ناصبیت کا نشانہ بنائے۔ منصور نے عباسی ظلم و جبر کے خلاف قیام کرنے والے عبداللہ بن حسن کو گرفتار کرنے کے بعد لوگوں سے خطاب کیا اور اس نے اپنی ناصبیت کا ثبوت دیتے ہوئے علی ابن ابیطالب اور امام حسن علیہماالسلام سمیت ابوطالب علیہ السلام کے تمام فرزندوں کے خلاف دشنام طرازی کی اور گستاخی کا ثبوت دیتے ہوئے کہا: اس خدا کی قسم جس کے سوا کوئی خدا نہیں ہے کہ ہم نے ابوطالب کے فرزندوں کے خلافت میں تنہا چھوڑا اور ہم نے ان سے کوئی سروکار نہیں رکھا؛ ابتداء میں علی ابن ابیطالب نے خلافت کی اور ان کے بعد حسن بن علی اٹھے ۔۔۔۔ (منصور نے یہاں جھوٹ کا سہارا لے کر کہا) اور معاویہ نے مکاری کرکے ان کو ولیعہدی کا وعدہ دیا اور معاویہ نے سفید و سیاہ پر قبضہ کیا اور انہیں بے دخل کردیا۔ حسن بن علی نے بھی تمام امور معاویہ کے سپرد کئے اور (معاذاللہ) حسن بن علی نے عورتوں کی طرف اپنی توجہ مبذول کردی۔٭ اور وہ آج ایک سے شادی کرتے اور دوسرے روز طلاق دیدیتے اور اسی کام میں مصروف تھے کہ اپنے بستر میں دنیا سے اٹھ گئے۔۔۔63 ٭ اپنی بات: یہاں ناصبی منصور عباسی نے ایک فنی غلطی کا ارتکاب کیا ہے اور وہ یوں کے اس کے دسترخوانوں پر پلنے والے راویوں نے امام حسن علیہ السلام پر الزام لگایا ہے کہ آپ (ع) کوفہ میں اپنے والد امیرالمؤمنین علیہ السلام کی حکومت کے زمانے میں شادیوں اور طلاقوں کے چکر میں پڑ گئے تھے لیکن منصور نے اپنے ہی منشیوں کی بات رد کرتے ہوئے کہا کہ “جب معاویہ نے اقتدار پر مکاری سے قبضہ کیا تو امام (ع) نے عورتوں کو توجہ دینا شروع کردی اور اس بات سے ثابت ہوتا ہے کہ جھوٹے بھلکڑ ہوتے ہيں”۔ استاد هاشم معروف الحسنی اس بے بنیاد اور نامردی پر مبنی تہمت کا جواب دیتے ہوئے لکھتے ہیں: ستر اور نوے اور ان سے کم یا زیادہ شادیوں سے متعلق روایات اور آپ پر (معاذاللہ) زن پرستی کا الزام لگانے والی روایات نیز امیرالمؤمنین علیہ السلام کی جانب سے امام حسن (ع) کی ملامت پر مبنی روایات کی اسناد سے معلوم ہوتا ہے کہ ان کا منبع و ثبوت صرف وہ روایات ہیں جو مدائنی اور اسی جیسے جھوٹوں سے نقل ہوئی ہیں۔ ہاشم معروف الحسنی مزید لکھتے ہیں: مدائنی، واقدی اور ان جیسے دیگر مؤرخین نے تاریخ ایسی جابر حکمرانوں کے سائے میں لکھی ہے جو اہل بیت علیہم السلام کے دشمن تھے، اور اہل بیت (ع) کے حقائق کو متنازعہ بنانے اور انہیں نقصان پہنچانے کے سلسلے میں کسی بھی کوشش و سازش سے فروگذاشت نہیں کرتے تھے۔ جبار عباسی حکمران بھی تعصب اور نیت کی پلیدی کے حوالے سے اپنے اموی اسلاف سے کسی طور بھی کم نہ تھے۔ عباسی بھی علویوں کے خلاف جعل حدیث کے حوالے سے امویوں کے ہمدست تھے (اور عباسیوں نے اہل بیت (ع) کے خلاف جعلی روایات و احادیث بنانے کا اموی سلسلہ جاری رکھا) عباسی حسنی سادات کے خلاف خاص قسم کا کینہ رکھتے تھے کیونکہ جن علویوں نے عباسی ستم کے خلاف جہاد کیا ان میں حسنی سادات سر فہرست تھے۔ 64 حقیقت کیا ہے؟ اب تک ہم نے امام حسن علیہ السلام کی شادیوں اور طلاقوں کی کثرت سے متعلق تہمتوں کا جواب دیا اور ثات کیا گیا کہ یہ بہتان امام حسن علیہ السلام کے زمانے اور امویوں کی طویل بادشاہت کے زمانے میں کہیں بھی نقل نہیں ہوا ہے اور عباسیوں کے دور میں منصور نے اس کی بنیاد رکھی ہے۔ حقیقت یہ ہے امام حسن علیہ السلام کی ازواج کی تعداد آٹھ یا دس65 سے زیادہ نہ تھی جن میں اکثریت کنیزوں کی تھی اور اس زمانے میں یہ ایک معمول کی بات تھی اور ہر آدمی کی بیویاں بھی ہوتی تھیں اور کنیزیں بھی تھیں جن کی تعداد کئی اشخاص کے ہاں اس تعداد سے کہیں زیادہ ہوتی تھی لیکن کسی نے کسی پر اس حوالے سے کوئی اعتراض نہیں کیا ہے اب کیا واقعہ رونما ہوا کہ زمانے کے معمول کے مطابق شادی کرنا اور کنیزیں رکھنا رسول اللہ (ص) کی آنکھوں کے تارے امام حسن علیہ السلام کے لئے عیب قرار پایا اور انہیں اس بے شرمانہ یلغار کا نشانہ بنایا گیا؟ کیا شادیوں کی اتنی تعداد روایت کے جعلی پن کی علامت نہیں ہے؟ اور پھر ہم نے ابتداء میں ہی ذکر کیا کہ رسول اللہ (ص) اور آل رسول اللہ (ص) کے گھوڑوں، خچروں، گدھوں، اونٹوں، تلواروں، دستاروں اور جوتوں تک کے نام ذکر کرنے والے مؤرخین نے آپ (ع) کی بیویوں کے نام اور ان کے خاندانوں کے نام ذکر کیوں ذکر نہيں کئے کیا یہ بات ان روایات کے جعلی پن کا ثبوت نہيں ہے؟ ابوطالب مكّى نے امام حسن علیہ السلام کی زوجات کی تعداد دوسوپچاس بتائی ہے ہم پوچھتے ہیں کہ اس نے ان زوجات میں سے چند ہی زوجات کا نام پتہ کیوں نہیں بتایا؟ اور ہاں! واقدی اور ابوالحسن کی راہ پر گامزن مؤرخین امام (ع) کے لئے اتنی ساری شادیوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے امام (ع) کے فرزندوں کی تعداد 22 یا 31 سے زیادہ کیوں نہیں بتاسکے ہیں؟66 ابوطالب مکی سے پوچھتے ہیں کہ اگر امام علیہ السلام کی زوجات کی تعداد چارسو سے زیادہ تھی تو آپ کے فرزندوں کی تعداد اکتیس سے زيادہ کیوں نہیں ہوئی؟ کیا ان زوجات میں سے اکثریت بانجھ خواتین کی تھی؟ یا پھر یہ روایت ایک بہتان اور ایک ناروا تہمت ہے؟ اپنی بات: وہ جواب جو معترضین کے کے لئے زیادہ قابل قبول ہے ہم نے یہاں علمی اور تحقیقی جواب دے دیا جو عام طور پر اہل بیت (ع) کے دشمن کم ہی پڑھتے ہیں لہذا ہم ان کے اپنی منطق سے استفادہ کرتے ہوئے ان ہی کی منطق میں بھی جواب دیتے ہیں اور وہ یوں کہ: ہم کہتے ہیں کہ خالد بن ولید نے صحابی “مالک بن نویرہ کو قتل کیا اور اسی رات ان کی زوجہ سے ہم بستری کی” تو یہ حضرات کہتے ہیں کہ صحابی مجتہد ہے اور اس نے اجتہاد کرکے ایسا کیا اور اجتہاد میں خطا کرنے والا پھر بھی ایک ثواب کماتا ہے! ہم کہتے ہیں کہ ام المؤمنین عائشہ نے زبیر اور طلحہ کے ساتھ مل کر خلیفہ وقت کے خلاف بغاوت کی اور جمل کا فتنہ برپا کرکے سولہ ہزار مسلمانوں کو موت گھاٹ اتارا، کہتے ہیں جناب انھوں نے اجتہاد کیا اور اگر غلطی بھی ہوئی ایک ثواب پھر بھی انہیں ملا ہے! ہم کہتے ہیں کہ غدیر خم میں اللہ کے حکم پر رسول اللہ (ص) نے امیرالمؤمنین علیہ السلام کو جانشین کے طور پر مقرر فرمایا اور اجتہاد بھی نص کے مقابلے میں بے کار ہے پھر بعض لوگوں نے رسول اللہ (ص) کا جنازہ چھوڑ کر سقیفہ میں “نجات امت” کا جرگہ بپا کیا اور خلیفہ ہوتے ہوئے انھوں نے خلیفہ کا تعین کیا تو کہتے ہیں کہ اصحاب کو ہر صورت میں اجتہاد کا حق حاصل ہے اور اگر خطا ہوئی بھی ہو پھر بھی اہل سقیفہ نے ایک ثواب کمالیا ہے! ہم کہتے ہیں کہ معاویہ نے خلیفہ مسلمین کے خلاف بغاوت کی اور صفین میں عمار یاسر اور اویس قرنی اور چھیاسٹھ دیگر صحابہ سمیت ہزاروں مسلمانوں کا خون کیا تو کہتے ہیں کہ معاویہ مجتہد تھا اور اس کا یہ عمل کم از کم اس کے لئے ایک ثواب کما لایا ہے۔ ہم کہتے ہیں کہ بہت خوب اب ہماری اس بات کی طرف توجہ دیں کہ اگر ہم مان بھی لیں کہ امام حسن نے تمہارے بقول اتنی ساری شادیاں کی ہیں تو کیا ان کا علم و اجتہاد آپ کے محبوب صحابیوں سے بھی کم ہے جنہوں نے اسلام اور مملکت اسلام کی بنیادیں ہلادیں اور مرکزی حکومت کے خلاف بغاوت کی اور یہ حضرات کہتے ہیں کہ انھوں نے اجتہاد کیا لیکن امام حسن (ع) کو شادیوں اور طلاقوں کے بارے میں اجتہاد کا حق حاصل نہیں دیتے! اور اس عمل کو عصمت امام کا ناقض سمجھتے ہیں؟ چنانچہ اگر جھوٹوں کے جھوٹے دعوے صحیح ہیں تو ہم ان ہی کی منطق کے مطابق کہتے ہیں کہ آپ (ع) نے بھی اجتہاد کیا اور نہ صرف آپ (ع) کی شخصیت میں کوئی کمی نہیں آئی بلکہ ان ہی کے قاعدے کے مطابق کم از کم ایک ثواب بھی کمایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 1۔ كافى، ج 6، ص 56۔ 2۔ یعنی جس شخص سے مشورہ کیا جاتا ہے اس کو معتمد اور ہوشیار و دانا ہونا چاہئے اور امور کے انجام سے واقف ہونا چاہئے۔ 3۔ محاسن برقى، ج 2، ص 601؛ منتخب التواریخ، ص 190۔ 4۔ كافى، ج 6، ص 56؛ بحارالانوار، ج 44، ص 172۔ 5۔ انساب الاشراف، ج 3، ص 25۔ 6۔ تاریخ الخلفاء، ص 191۔ 7۔ وكان على (ع) یضجر من ذلك فكان یقول فى خطبته ان الحسن مطلاق فلاتنكحوه (بحارالانوار، ج 44، ص 169۔) 8۔ وہی منبع۔ 9۔ چهارده معصوم (زندگانى امام حسن(ع))، ص 553۔ 10۔ بحارالانوار، ج 44، ص 173۔ 11۔ الصواعق المحرقه، ص 139۔ 12۔ كافى، ج 6، ص 56۔ 13۔ البدء و التاریخ، ج 5، ص 74۔ 14۔ مناقب آل ابى‏طالب، ج 4، ص 30۔ 15۔ وہی منبع۔ 16۔ چهارده معصوم، ص 553، به نقل از قوت القلوب۔ 17۔ صواعق المحرقہ ابن حجر ص 114۔ 18۔ بحارالانوار ج 6 ص 58۔ 19۔ احقاق الحق، ج 9، ص 266، بحوالہ المعجم الکبیر طبرانی، ص 135، طبع طهران; مناقب على بن ابى طالب (ابن المغازلى الشافعی) صص 150-148 و صص 102-101، روایت 144‏۔ 20۔ الصواعق المحرقہ صفحه 114۔ 21۔ صحیح ترمذی صفحه 306 ج 2۔ 22۔ صحیح ترمذی صفحه 306 ج 2۔ 23۔ ینابیع المودۃ صفحه 164۔ 24۔ بحار الأنوار ج26 ص269 باب6 ح 5 41۔ 25۔ خطبہ حضرت سیدہ فاطمہ سلام اللہ علیہا جس میں آپ (س) نے سورہ تکویر کی آخری آیت ” وَمَا تَشَاؤُونَ إِلَّا أَن يَشَاءَ اللَّهُ رَبُّ الْعَالَمِينَ ﴿آیت 29 سورہ تکویر﴾، سے تضمین فرمائی ہے۔ 26۔ سورہ احزاب،آیت٣٣۔ 27۔ سورہ الشورى آیت 23۔ 28۔ سورہ آل عمران آیت61۔ 29۔ البدایة و النهایة، ج 7، ص 37۔ 30۔ مناقب آل ابى‏طالب، ج 3، ص 401۔ 31۔ البدایة و النهایة، ج 7، ص 37۔ 32۔ الامام المجتبى(ع)، ص 10۔ 33۔ وہی منبع، ص 86۔ 34۔ تاریخ دمشق، (حیاة الامام الحسن(ع))، ص 154۔ 35۔ نیل الاوطار، ج 6، ص 230؛ من لایحضره الفقیه، ج 3، ص 320۔ 36۔ تاریخ دمشق، (ترجمه امام حسن(ع))، ص 155۔ 37۔ روضةالصفا، ج 3، ص 20۔ 38۔ تاریخ الخلفاء، ص 191۔ 39۔ بحارالانوار، ج 44، ص 169۔ 40۔ تذكرةالخواص، ص 121۔ 41۔ بحارالانوار، ج 44، ص 173۔ 42۔ میزان الاعتدال، ج 3، ص 107۔ 43۔ لسان المیزان، ج 4، ص 386۔ 44۔ المنتظم، ج 7، ص 189۔ 45۔ شذرات الذهب، ج 3، ص 120۔ 46۔ الجرح والتعدیل، ج 4، ص 21۔ 47۔ الكامل فى‏التاریخ، ج 9، ص 44۔ 48۔ الأعلام، ج 7، ص 160۔ 49۔ الغدیر، ج 5، ص 290۔ 50۔ اعیان الشیعه، ج 46، ص 172۔ 51۔ سیرةالائمة الاثنى عشر، ج 1، ص 620۔ 52۔ لسان المیزان، ج 4، ص 386۔ 53۔ میزان الاعتدال، ج 1، ص 430۔ 54۔ وہی منبع، ج 4، ص 350۔ 55۔ وہی منبع، ج 6، ص 198۔ 56۔ تذكرة الحفاظ، ج 1، ص 348۔ 57۔ زندگى دوازده امام، ج 1، ص 604۔ 58۔ جامع الرواة، ج 1، ص 225 و 284۔ 59۔ الخلاصة، ص ؟ 60۔ مرآةالعقول، ج 21، ص 96۔ 61۔ وہی منبع۔ 62۔ الخلاصة، ص ؟ 63۔ سیرةالائمة الاثنى عشر، ج 1، ص 618۔ 64۔ زندگى دوازده امام، ج 1، ص 602۔ 65۔ صلح الحسن(ع)، ص 25۔ 66۔ البدء و التاریخ، ج 5، ص 74؛ الفصول المهمه، ص 166؛ بحارالانوار، ج 44، ص 168؛ كشف الغمه، ج 2، ص 152؛ اعلام الورى، ص 213؛ ناسخ التواریخ، جلد امام حسن(ع)، ص 270؛ تذكرة الخواص، ص 212؛ نورالابصار، ص 136؛ ذخائرالعقبى، ص 143؛ تاریخ یعقوبى، ج 2، ص 228۔ ۔۔۔۔TAKE LESSONS , IMPROVE YOUR AQAED OR GO STRAIGHT TO JAHANNUM WHERE YOUR UNGUIDED HEROES ARE WAITING WITH THEIR OPEN ARMS AT THE BANK OF KAUSER (HADEES NARRATED BY ABU HORAIRAH)
  4. Maryam

    AsalamuAlaikum,

    This has nothing to do with the number of Hassan’s (r.a) divorces but I would like to share my understanding of the term AhleBait and who it refers to.

    Firstly, we need to clarify a few points so here goes:

    – Both Sunnis and Shi’aas also have a concept of Imaams (leaders) but Sunni deen doesn’t revolve around Imaams as the Shi’aa deen does.

    – Shi’aas and Sunnis don’t have common books of hadith. In the Shi’aas books of hadith you’ll see narrations ending at the imaams, and the sayings of imaams are a source for them. So, the books of hadith can’t be used to reach a common belief.

    – One thing to note here is that when debating with Shi’aas you’ll often see Shi’aas quoting references from Sunni books of hadith and history to prove their point. We can’t do the same often because Shi’aas filtered most of the Sahaba as unauthentic and their views can go to as extreme as all sahaba apostated after the death of Rasulullah except the Ahle-bait (their understanding of it) and four others. And this is not a totally scarce concept in Sh’ism, it can be found in the books of their famous scholars, like the Persian Baqir Majlisi.

    – Also, when you are quoting for Sunni references you have to take-care of rules formulated by sunni muhaditheen. We don’t use the books of history (especially when they contain weak chains of narration or contain no chain at all) as a proof of matters of Shar’iah (jurisprudence) and Shi’aas use them when to prove the matter of ‘Aqaid (beliefs) for which the Sunni scholars have laid down very even stricter conditions.

    – Also, you will very commonly find narrations with D’aeef (weak) and Mawdhu’ (fabricated) chains from Sunni sources used as evidences by Shi’aa scholars.

    – The Shi’aa scholars laid down rules of Hadith, and you find Al-Kaafi with Tehqeeq and it does contain many D’aeef (weak) narrations. One should also note here that the most authentic book of hadith with Shi’aas, Al-Kaafi, contains many D’aeef (weak) narrations.

    SO, the only thing common between Shi’aas and Sunnis is the Qur’an.
    And this is the reason why I will predominantly use the Qur’an.
    Surah Al Ahzaab 33:33. Does this verse really prove that the Ahle-Bait only includes Fatimah, Ali, Hasan, Hussain and their children like Shi’aas claim it does?One Important thing to note down here is that the Sunnis do not speak against the great virtues of Fatimah, Ali, Hasan and Husain رضى الله عنهم. Another important think to note down is that a generic proof for Qur’an for the significance of Ahle-Bait won’t really prove anything because the significance and status of Ahle-Bait is something that even Sunnis believe.

    وَقَرْنَ فِي بُيُوتِكُنَّ وَلَا تَبَرَّجْنَ تَبَرُّجَ الْجَاهِلِيَّةِ الْأُولَىٰ ۖ وَأَقِمْنَ الصَّلَاةَ وَآتِينَ الزَّكَاةَ وَأَطِعْنَ اللَّهَ وَرَسُولَهُ ۚ إِنَّمَا يُرِيدُ اللَّهُ لِيُذْهِبَ عَنكُمُ الرِّجْسَ أَهْلَ الْبَيْتِ وَيُطَهِّرَكُمْ تَطْهِيرًا
    And stay quietly in your houses, and make not a dazzling display, like that of the former Times of Ignorance; and establish regular Prayer, and give regular Charity; and obey Allah and His Messenger. And Allah only wishes to remove all abomination from you, ye members of the Family, and to make you pure and spotless. (Surah Al Ahzaab 33:33)

    (Suppose we agree that this Ayah directly refers to Ali, Fatimah, Hasan and Hussain, but by no stretch of explanation can you bring the numeric 12 in the equation – the 12 Imams). Allah would not mention such an important belief in such a vague way).

    – From the context it’s proven easily that those whom the Qur’an is directly addressing when using the term Ahle-Bait are the wives of Rasulullah.

    – I’m not trying to prove here that Fatimah, Ali, Hasan and Hussain رضى الله عنهم are not included in the Ahle-Bait. Rather, I’m highlighting the fact that Qur’an directly addresses the Azwaaj e Mutahiraat , the Ummahatul Mo’mineen when using the term Ahle-Bait, and Fatimah, Ali, Hasan and Hussain are included as well as evident from the narrations that will be mentioned ahead.

    (It is worth mentioning that not all the Sunni commentators (mufasireen) of Qur’an have mentioned wives of Rasulullah under the term Ahle-Bait. The reason for that being an un-ignorable influence of Shi’aa beleifs in some of our discussions, like the Shi’aa version of Karbala and also the term Ahle-Bait).

    Ibn e Kathir says in the explanation of the Ayah:
    هذا نص فى دخول أزواج النبى صلى الله عليه وسلم فى أهل البيت ها هنا ، لأنهن سبب نزول هذه الآية
    “This is a solid proof that the wives of Rasulullah are included in ‘the people of the house’ here, because they are the reason for the revelation of this Ayah’
    Zamakhsari says :
    وفي هذا دليل بيّن على أنّ نساء النبي صلى الله عليه وسلم من أهل بيته
    “In it there is a clear proof that the wives of Rasulullah are from ‘the people of his house’ ”

    This Ayah, the Ayah before it and the Ayah after it all are addressing the Ummahatul Mo’mineen directly. It is very ‘tough’ to believe that Qur’an suddenly changed the addressee without even using the word يا. This is simply not compatible with the style of Qur’an. It is likely that Qur’an included a broad term that included others than the Ummahatul Mo’mineen, but, to believe that it doesn’t include Ummahatul Mo’mineen is very tough to prove.

    Now for the Literal Meaning of اهل البيت

    It is mentioned in Lisaab ul ‘Arab:” اهل البيت سكانه, the people of home are its residents”. The word اهله is used very commonly in Arabic referring to ‘his wife’. It is said in Arabic تاهل فلان, meaning ‘so and so became one with a wife’. It is also used in hindi/urdu in the same sense: ‘ghar wali’ and in farsi as ‘ahle khana’.

    A very important rule of Tafseer is that a portion of Qur’an elaborates other portion. The word اهل البيت only appears at one more place in the Holy Qur’an and there it is used for the Sarah عليها السلام (the wife of Ibrahim عليه السلام) and for Ibrahim عليه السلام. At that time Sarah عليه السلام had no child so we can’t say that it directly addressed the children as well. The very Ayah that I’m referring is to the one where angels come and give her glad tiding of a child in her old-age:

    They said: “Dost thou wonder at Allah’s decree? The grace of Allah and His blessings on you, o ye people of the house! for He is indeed worthy of all praise, full of all glory!” (Surah Hud 11:73)
    The Qur’an uses the word و (and) at the beginning of the Ayah # 34 which proves that it is related to what was being said earlier. Al-Qurtabi says in his Tafseer: “the correct thing is that وَاذْكُرْنَ مَا يُتْلَىٰ فِي بُيُوتِكُنَّis related to what was before it”.

    Clarification: Why does Qur’an use masculine?

    Shi’aa scholars argue that if Ahle-Bait refers to the Azwaaj (wives) of Rasulullah
    صلى الله عليه و سلم directly then why it uses the masculine term for them.

    Somehow who knows ‘arabic grammar can easily make-out that just because Qur’an uses the masculine term we can’t ‘conclude’ for certain that those referred to are all masculine too.

    Ar-Raazi says in the Tafseer of this Ayah: “The reason for masculine addressing (tazkeer ul Khitaab) is the word اهل (Ahl) and اهل (Ahl) is masculine “. The point raised by Imam Raazi is very valid because the word اهل البيت is used at one more place in the Holy Qur’an and again with a masculine address. رَحْمَتُ اللَّهِ وَبَرَكَاتُهُ عَلَيْكُمْ أَهْلَ الْبَيْتِ , this is in Surah Hud 11:73.
    In Arabic plural masculine is used to address women out of respect. There are numerous examples of it in ahadith and even in the Holy Qur’an. Just a couple of Ayaat before this Ayah in Ayah # 31: وَمَن يَقْنُتْ مِنكُنَّ, it should be ومن يقنتن

    When addressing females:

    There are narrations quoted in Bukhari which tell us that Prophet Muhammad used to ask ‘Aisha كيف تيكم when she was ill, this is an example of similar use. So, using a masculine plural for feminine is common in Arabic.

    The famous word زملونى which Prophet Muhammad said to Khadija is an example of it. It is there in ahadith, Qur’an and in the old Arabic poetry. I can give tens of examples for it. For more details we can see the commentary of Tabari on this Ayah where has quoted numerous examples from daily life for using plural masculine terms for addressing women.
    If those who are addressed are male and female then we also use masculine terms for addressing in Arabic. So, if we think that Ali, Hasan and Hussain رضى الله عنهم are directly included then Qur’an can use masculine for that reason. This has been elaborated by Tantawi in his Tafseer:
    وقد أجمع أهل اللسان العربى على تغليب الذكور على الإِناث فى الجموع ونحوها
    “All the linguist agree Arabic agree to give priority to males over females when addressing a crowd of both and so on”

    Clarification: Why doesn’t Qur’an use people of the ‘houses’?

    Few shi’aa scholars argue that if it refers to all ummahatul mo’mineen then the word used should be اهل البيوت (the people of the houses) because the wives of rasulullah used to live in separate hujraat (حجرات).
    Point # 1 – Although ummahatul mo’mineen lives physically in different hujraat, but they were part of the same home, the home of rasulullah.
    Point # 2 – اهل البيت is اسم جنس which is used for both plural and singular both.

    Clarification: The hadith of the cloak حديث كساء

    There are various narrations in which Prophet Muhammad wrapped Ali, Fatimah, Hasan and Hussain under a cloak and recited the Ayah under discussion (Surah Al Ahzaab 33:33) and in some narrations he also اللَّهُمَّ هَؤُلَاءِ أَهْلُ بَيْتِي ” Oh Allah ! These are people of my home”. This hadith is very famous amongst Shi’aas as the Hadith of cloak (كساء), and they use it to prove that Ummahatul Mo’mineen are not included in the Ahle-Bait. For us, these ahaadith contain evidence that Fatimah, Ali, Hasan, Hussain are also included in Ahle-Bait and Ummahatul Mo’imneen are of-course included by default. The hadith of the cloak are narrated from ‘Aisha, Umm e Salamah, Abdullah bin ‘Abbas, Abi Sa’eed Al Khudri, Al- Bara’ bin ‘Aazib, Abdullah bin J’afar, Ans bin Malik, Abi Al Hamraa’, Hassan bin ‘Ali and Waathla رضي الله عنهم.

    Narration from ‘Aisha رضي الله عنها
    ‘A’isha رضي الله عنها reported that Allah’s Apostle صلى الله عليه وسلم went out one morning wearing a striped cloak of the black camel’s hair that there came Hasan b. ‘Ali. He wrapped him under it, then came Husain and he wrapped him under it along with the other one (Hasan). Then came Fatima and he took her under it, then came ‘Ali and he also took him under it and then said: Allah only desires to take away any uncleanliness from you, O people of the household, and purify you (thorough purifying). (Sahih Muslim, Kitab Al-Fada’il Al-Sahabah)

    There are narrations in which ‘Aisha رضى الله عنها asked Rasulullah ‘Am I included amongst them’ and he replied that ‘Indeed You are on the good’. This is not a ‘No’ as Shi’aas portray it, but it actually shows that she is on an even better status, and that is because she is the directly part of Ahle-Bait as Qur’an includes them,

    And for others, Prophet Muhammad made a d’uaa as it is evident from few narrations: اللَّهُمَّ هَؤُلَاءِ أَهْلُ بَيْتِي.
    There is a narration from S’ad bin Abi Waqqas in the Al-Kubra of Nasai where he uses the following words دعا رسول الله عليا وفاطمة وحسنا وحسينا اللهم هؤلاء أهل بيتي
    “Rasulullah made d’uaa for Ali, Fatimah, Hassan and Hussain : Oh Allah these are the people of my home”
    There are various narrations from S’ad bin Abi Waqqas which say the same thing, and the Prophet Muhammad made this d’ua immediately after the Ayah was revealed.

    Narration from Umme Salamah رضي الله عنها
    Sayyidah Umm Salamah رضي الله عنها reported that the Prophet صلى الله عليه وسلم put a cloak over Hasan, Hussain, Ali and Fatimah and prayed, “O Allah, they are people of my house and closest to me. Remove from them evil and purify them a perfect purification.” Umm Salamah (RA) submitted, “I too am with them, O Messenger of Allah!” He said, “Indeed you are on good.” (Jami Tirmidhi, Kitab ul Manaqib, Authenticated by al-Albani)

    There is a narration in the Tafseer of Al- Baghawi (بغوى) which has been authenticated by Abdur Razzaq Al-Mahdi which has the following words in the reply to the question of Umme Salamah: بلى إن شاء اللّه, Indeed, Yes, if Allah wills.
    In another narration in Tabari he replied: إنك من أهلي, ‘Indeed you are from my home’.

    And in many other narrations Prophet Muhammad gave her the same reply that he gave ‘Aisha: “Indeed you are on good or towards good”

    Also, to be noted that the if the thing is the way Shi’aas claim that only those who were in the cloak are amongst the ahle-bait, then how do they include the 12 imaams in them ?

    Narrations regarding Wathla (واثله رضى الله عنه )
    There are authentic narrations in which Prophet Muhammad made the d’uaa: اللهم هؤلاء أهلي for Ali, Hassan, Hussain and Fatimah and Wathla (واثله) asked Rasulullah ‘Am I among your home (family) too? ‘. Prophet Muhammad replied ‘And you are from my family’. This hadith is in Masnad Ahmed and is authentic. There are other narrations where Prophet Muhammad included Salman Al Farsi in Ahle-Bait as well, but they are not authentic. This also proves that Rasulullah when doing d’uaa to Allah to include the-four in Ahle-Bait wasn’t looking at their genealogy alone.
    So, the conclusion we reach is:

    – Ummahatul Mo’mineen are the ones address in Ayah 33:33 of the Holy Qur’an directly.

    – Ali, Fatimah, Hasan and Hussain رضى الله عنهم are also included in the Ahle-Bait because of the d’uaa of the Rasulullah. So, hadith of the cloak is actually a d’uaa.

    – Hadith cannot abrogate a Qur’anic Ayah and as Ummahatul Mo’mineen are the direct addressee of Ahle-Bait according to Holy Qur’an; no hadith can take them out of the list, no matter how authentic it is.

    – The fact that Prophet Muhammad included other than his progeny in the Ahle-Bait proves that there are no ‘reserved’ seats for people just because of their blood-line.

    Darud e Ibrahimi and the word Aal آل

    Many Sh’iaas use the Darud e Ibrahimi to prove their point regarding their lineage’s supremacy or the infallibility of their imaams, which is actually almost impossible to prove from the darood. You will commonly listen to terminologies like Aal e Rasool, Aal e Muhammad, Aal Kisaa’, Aal e Ataa’ amongst sh’iaas for this reason. Sunnis don’t disagree that Aal have a special position in Islam, that is why we they make d’uaa for them in our Salah, but what Sunnis understand from آل محمد is different from Shi’aas understanding of it.

    Allama ibn e Mansur Afreeqi Misri writes in Lisaan ul ‘Arab: “The آل of a person is his اهل, and the آل of Allah and his Messenger are their friends (followers)…”

    The discussion will extend to several pages if I give examples for usage of آل in Quran, hadith and common Arabic. I’ll briefly elaborate our understanding of the word آل.

    آل حقيقى : These are the wives and the children of Prophet Muhammad.
    An important point to note is that in a narration in Bukhari the word ازواجه و ذريته (his wives and his children) is used, hence, explaining what the word آل is used to refer to directly.

    آل مجازى: These include the son in law and grandchildren of Rasulullah.

    آل نسبى: These include the guided followers of Rasulullah, who try their best to follow him and his mission.

    In the end I would like to clarify that this is just an attempt to move towards Sh’iaa-Sunni Unity and not a hate speech.

    Salam.

  5. Shani

    Hazrath Umar broke bibi Fatima ribs?? Errr… I don’t think, so these fairy tales have been fed to the Shia masses from day 1 and they digest these lies without looking at the bigger picture.

    1. Lion af Allah stood back and watched his wife get crushed and his child murdered, don’t believe that crap for a second Shia make hazrath Ali sound like a coward (astagfirullah)

    2. If the child was unborn how do you know it was a boy??

    3. Hazrath Ali never fought against this horrific act and stayed “patient” but when it came to his caliphate he fought why?? Answer can be found in nahj ul balagah letter 6.

    4. Mohsin was according to Sunnis hazrath Ali son, who died in infancy. This makes much more sense.

    5. Shias took his infancy death as a propaganda tool and fabricated the story of Umar crushing bibi fatimah

    6. How on earth can someone who has just had a miscarriage and broken ribs survive for six months?

  6. Absolutely absurd arguments , these questions have often been answered .
    You better go to a qualified Doctor and ask him how long one can survive after a miscarriage or after brocken ribs . Why there should bea fabrication of such
    stories against the ruler of the time , but one must know that truth prevails and
    with Umars background and his lineage , nothing is impossible . Is it not in history that his father was abondoned on earth on a refuse dump as he was allegedly an illegitimate ? read History . Is he not set out to kill the holy prophet , did he not hit his sister till she bled and also to his brother in law and the famous beggar tuned Narrator and also Governor who was hit for embezzlement and had to refund the money to exchequer .
    one should talk only after thoroughly studying the subject , your own books which you consider authentic confirms to all thesze points I said . Research Lalloo then speak .
    Aimmah e masoomeen (a s) are the direct progeny of Rasool e Akram (s) if you have no faith in his being immaculate and infallible , you can say anything afterall some christians and jews do abuse Mohammad (s) and say somuch nonsense , but to whom I am telling when their Omar , the illegitimate Hero himself called the Prophet in dillirium (out of mind maaz Allah) .

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s