Double standard in Shia hadith gradings


We know that: SHIA ULEMA STARTED GRADING THE HADITHS SO LATE.. BUT WHY?

WHAT TYPE OF STANDARD THEY APPLIED: “SIMPLY STRAIGHT FORWARD” OR “DOUBLE STANDARD”?

Let us start here with: The Big shia Scholar Al Ha’iri “الحائري” In His book Muktabas el Athar “مقتبس الأثر” part 3 page 73 says:

ومن المعلومات التي لا يشك فيها أحد أنه لم يصنف في دراية الحديث من علمائنا قبل الشهيد الثاني

“From the Information that No One doubts is that No one worked in The Science of Hadith from our scholars before the second Shaheed”

And the second Shaheed is Al Hassan Bin ZaynulDeen al Jab’ee al Amili “الحسن بن زين الدين الجبعي العاملي ” (Died 965 hijri).

In Wasael el Shia 30/258 The Scholar Al Hurr al Amili (died 1104 h) says That The Only reason for writing the Isnad is because They were being accused by the Sunnah of Making up the Hadiths and attributing them to the Imams.

( والذي لم يعلم ذلك منه ، يعلم أنه طريق إلى رواية أصل الثقة الذي نقل الحديث منه ، والفائدة في ذكره مجرد التبرك باتصال سلسلة المخاطبة اللسانيّة ، ودفع تعيير العامة الشيعة بأن أحاديثهم غير معنعنة ، بل منقولة من أصول قدمائهم ) ، المصدر : وسائل الشيعة

So Basically they did it later because they didn’t want the Muslims to criticize them and not for the purpose of actually learning the True Hadiths from the False ones and this is why they have a very weak science of Hadith and their books are full of contradictions, they never wanted the truth but just to escape criticism by their “enemies”.

Now lets see how majlisi graded hadith:

WE KNOW SHIA HADITH BOOK NAMELY: AL-KAFI WAS FIRST GRADED BY BAQIR MAJLISI [DIED 1110AH]!!

^^ IS IT NOT SO LATE FOR THOSE WHO TRUSTED AL-KAFI COMPLETELY TILL 1100YEARS?

NOW SHIA SAY: AL-KAFI HAS 9485WEAK HADITHS!?

Lets see how majlisi graded Al-Kafi in Miraat-ul-uqool:

(مجلسي مجهول2/423 – )
عِدَّةٌ مِنْ أَصْحَابِنَا عَنْ أَحْمَدَ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عِيسَى عَنِ الْحُسَيْنِ بْنِ سَعِيدٍ عَنْ فَضَالَةَ بْنِ أَيُّوبَ عَنْ أَبِي الْمَغْرَاءِ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ عَنْ أَبَانِ بْنِ تَغْلِبَ قَالَ سَمِعْتُ أَبَا عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) يَقُولُ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ ( صلى الله عليه وآله ) مَنْ أَرَادَ أَنْ يَحْيَا حَيَاتِي وَ يَمُوتَ مِيتَتِي وَ يَدْخُلَ جَنَّةَ عَدْنٍ الَّتِي غَرَسَهَا اللَّهُ رَبِّي بِيَدِهِ فَلْيَتَوَلَّ عَلِيَّ بْنَ أَبِي طَالِبٍ وَ لْيَتَوَلَّ وَلِيَّهُ وَ لْيُعَادِ عَدُوَّهُ وَ لْيُسَلِّمْ لِلْأَوْصِيَاءِ مِنْ بَعْدِهِ فَإِنَّهُمْ عِتْرَتِي مِنْ لَحْمِي وَ دَمِي أَعْطَاهُمُ اللَّهُ فَهْمِي وَ عِلْمِي إِلَى اللَّهِ أَشْكُو أَمْرَ أُمَّتِي الْمُنْكِرِينَ لِفَضْلِهِمْ الْقَاطِعِينَ فِيهِمْ صِلَتِي وَ ايْمُ اللَّهِ لَيَقْتُلُنَّ ابْنِي لَا أَنَالَهُمُ اللَّهُ شَفَاعَتِي .

Why majlisi graded this hadith as weak?

Bcoz this tradition is majhool (unknown) not because of “a group of our friends [bcoz these peoples are known to Al-kulayni as stated in intro of Al-kafi] narrating from Ahmed bin Muhammad bin Eesa” but because of مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ. This chain is Majhool, because the identity/status of مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ is Majhool/unknown!!

Now, who do we find narrating this next hadith that is rated “SAHEEH” i.e. AUTHENTIC by Al Majlisi? It’s none other than our old MAJHOOL chap, مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ

9- (مجلسي صحيح23/399 –)

أَبُو عَلِيٍّ الْأَشْعَرِيُّ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ عَنْ أَحْمَدَ بْنِ النَّضْرِ عَنْ عَمْرِو بْنِ شِمْرٍ عَنْ جَابِرٍ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ أُتِيَ أَمِيرُ

الْمُؤْمِنِينَ ( صلوات الله عليه ) بِرَجُلٍ مِنْ بَنِي ثَعْلَبَةَ قَدْ تَنَصَّرَ بَعْدَ إِسْلَامِهِ فَشَهِدُوا عَلَيْهِ فَقَالَ لَهُ أَمِيرُ الْمُؤْمِنِينَ ( عليه السلام ) مَا يَقُولُ هَؤُلَاءِ الشُّهُودُ قَالَ صَدَقُوا وَ أَنَا أَرْجِعُ إِلَى الْإِسْلَامِ فَقَالَ أَمَا إِنَّكَ لَوْ كَذَّبْتَ الشُّهُودَ لَضَرَبْتُ عُنُقَكَ وَ قَدْ قَبِلْتُ مِنْكَ وَ لَا تَعُدْ فَإِنَّكَ إِنْ رَجَعْتَ لَمْ أَقْبَلْ مِنْكَ رُجُوعاً بَعْدَهُ .

Conclusion: This is Al-Majlisi’s inconsistency…

Now some shia might say: Is there is only one مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ in the books of Shia Rijal? No..

Here are some of the مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ that are found in the books of rijal.

1) محمد بن سالم أبو سهل
2) محمد بن سالم الأزدي
3) محمد بن سالم بن عبد الرحمن
4) محمد بن سالم الطائي
5) محمد بن سالم القمي
6) محمد بن سالم الكوفي
7) محمد بن سالم النهدي
8) محمد بن سالم بن أبي سلمة الكندي السجستاني
9) محمد بن سالم بن أفلح
10) محمد بن سالم بن شريح
11) محمد بن سالم بن عبد الحميد
12) محمد بن سالم بياع القصب
And more…

So, this very clearly indicates that just because the same name is found in two different traditions (or more), we should not assume that they are the same person.

But truth is that: In all of these hadiths, مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ is the second generation مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ, who narrates between أَبُو عَلِيٍّ الْأَشْعَرِيُّ and أَحْمَدَ بْنِ النَّضْرِ and yet in these same circumstances, Al Majlisi decides to grade these hadiths as:

1. MAJHOOL (unknown narrator)

(مجلسي مجهول8/184 – )
أَبُو عَلِيٍّ الْأَشْعَرِيُّ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ عَنْ أَحْمَدَ بْنِ النَّضْرِ الْخَزَّازِ عَنْ جَدِّهِ الرَّبِيعِ بْنِ سَعْدٍ قَالَ قَالَ لِي أَبُو جَعْفَرٍ ( عليه السلام ) يَا رَبِيعُ إِنَّ الرَّجُلَ لَيَصْدُقُ حَتَّى يَكْتُبَهُ اللَّهُ صِدِّيقاً .

2. WEAK (so unknown narrators aren’t the issue anymore):

– مجلسي ضعيف 25 / 266 ،
أَبُو عَلِيٍّ الْأَشْعَرِيُّ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ عَنْ أَحْمَدَ بْنِ النَّضْرِ عَنْ عَمْرِو بْنِ شِمْرٍ عَنْ جَابِرٍ عَنْ أَبِي جَعْفَرٍ ( عليه السلام ) قَالَ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ ( صلى الله عليه وآله ) مَنْ قَالَ بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ لَا حَوْلَ وَ لَا قُوَّةَ إِلَّا بِاللَّهِ الْعَلِيِّ الْعَظِيمِ ثَلَاثَ مَرَّاتٍ كَفَاهُ اللَّهُ عَزَّ وَ جَلَّ تِسْعَةً وَ تِسْعِينَ نَوْعاً مِنْ أَنْوَاعِ الْبَلَاءِ أَيْسَرُهُنَّ الْخَنْقُ .

and,

3. AUTHENTIC (PERFECT CHAIN, now flaws!)

9- (مجلسي صحيح23/399 –)
أَبُو عَلِيٍّ الْأَشْعَرِيُّ عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ سَالِمٍ عَنْ أَحْمَدَ بْنِ النَّضْرِ عَنْ عَمْرِو بْنِ شِمْرٍ عَنْ جَابِرٍ عَنْ أَبِي عَبْدِ اللَّهِ ( عليه السلام ) قَالَ أُتِيَ أَمِيرُ الْمُؤْمِنِينَ ( صلوات الله عليه ) بِرَجُلٍ مِنْ بَنِي ثَعْلَبَةَ قَدْ تَنَصَّرَ بَعْدَ إِسْلَامِهِ فَشَهِدُوا عَلَيْهِ فَقَالَ لَهُ أَمِيرُ الْمُؤْمِنِينَ ( عليه السلام ) مَا يَقُولُ هَؤُلَاءِ الشُّهُودُ قَالَ صَدَقُوا وَ أَنَا أَرْجِعُ إِلَى الْإِسْلَامِ فَقَالَ أَمَا إِنَّكَ لَوْ كَذَّبْتَ الشُّهُودَ لَضَرَبْتُ عُنُقَكَ وَ قَدْ قَبِلْتُ مِنْكَ وَ لَا تَعُدْ فَإِنَّكَ إِنْ رَجَعْتَ لَمْ أَقْبَلْ مِنْكَ رُجُوعاً بَعْدَهُ .

Al Majlisi, recognize that in shia hadith books there are several partially named people, & there’s no way of knowing who they really are because their books of biography don’t help in making any distinction. The best clues they have are the generation in which the people lived (relative position in the chain).

So Majlisi try to use this idea to suit them. Sometimes the ambiguous person is UNKNOWN and sometimes he’s the most trustworthy man in history.

Conclusion: the narrator is in the same relative position in the chain surrounded by the same people, and in three identical circumstances Al Majlisi grades the hadiths in 3 different ways. So al Majlisi in his attempt to save religion of rafida was only depend upon lying & fooling.

THE TRUTH IS THAT SHIA DON’T HAVE BASIC KNOWLEDGE OF HADITH SCIENCE AT ALL.. THEY ONLY GRADE HADITH, JUST TO DEFEND THEMSELF FROM THE ATTACKS & ALLEGATIONS OF AHLE-SUNNAH, i.e. SHIA FABRICATE HADITHS & TAKE IT AS RELIGION..

3 Comments

Filed under Hadith science

3 responses to “Double standard in Shia hadith gradings

  1. I saw this interesting dialouge on a Sunni Shia Unity site , eye opener for munafiqs.
    ‎—————–جناب فضال کا ابو حنیفہ سے دلچسپ مناظرہ—————————–
    امام جعفر صادق علیہ السلام اور ابو حنیفہ کا زمانہ تھا ایک دن مسجد کو فہ میں ابو حنیفہ درس دے رہاتھااس وقت امام جعفر صادق علیہ السلام کے ایک شاگرد ”فضال بن حسن “اپنے ایک د وست کے ساتھ ٹہلتے ہوئے وہاں پہنچ گئے۔انھوں نے دیکھا کہ کچھ لوگ ابو حنیفہ کے ارد گرد بیٹھے ہوئے ہیں اور وہ انھیں درس دے رہے ہیں، فضال نے اپنے دوست سے کہا: ”میں اس وقت تک یہاں سے نہیں جاوٴں گا جب تک ابو حنیفہ کو مذہب تشیع کی طرف راغب نہ کر لوں۔“
    فضال اپنے اس دوست کے ساتھ اس جگہ پہنچے جہاں ابو حنیفہ بیٹھے درس دے رہے تھے، یہ بھی ان کے شاگرد وں کے پاس بیٹھ گئے۔تھوڑی دیرکے بعد فضال نے مناظرہ کے طور پر اس سے چند سوالات کئے۔

    فضال: ”اے رہبر !میرا ایک بھائی ہے جو مجھ سے بڑا ہے مگر وہ شیعہ ہے۔حضرت ابوبکر کی فضیلت ثابت کرنے کے لئے میں جو بھی دلیل لے آتا ہوں وہ رد کردیتا ہے لہٰذا میں چاہتا ہوں کہ آپ مجھے چند ایسے دلائل بتادیں جن کے ذریعہ میں اس پر حضرت ابوبکر ،عمراور عثمان کی فضیلت ثابت کر کے اسے اس بات کا قائل کر دوں کہ یہ تینوں حضرت علی سے افضل وبر تر تھے ۔“

    ابو حنیفہ: ”تم اپنے بھائی سے کہنا کہ وہ آخر کیوں حضرت علی کو حضرت ابو بکر ،عمر اور عثمان پر فضیلت دیتا ہے جب کہ یہ تینوں حضرات ہر جگہ رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کی خدمت میں رہتے تھے اور آنحضرت ،حضرت علی علیہ السلام کو جنگ میں بھیج دیتے تھے یہ خود اس بات کی دلیل ہے کہ آپ ان تینوں کو زیادہ چاہتے تھے اسی لئے ان کی جانوں کی حفاظت کے لئے انھیں جنگ میں نہ بھیج کر حضرت علی علیہ السلام کو بھیج دیا کرتے تھے ۔“

    فضال: ”اتفاق سے یہی بات میں نے اپنے بھائی سے کہی تھی تو اس نے جواب دیا کہ قرآن کے لحاظ سے حضرت علی علیہ السلام چونکہ جہاد میں شرکت کرتے تھے اس لئے وہ ان تینوں سے افضل ہوئے کیونکہ قرآن مجید میں خدا کاخود فرمان ہے:

    ” وَفَضَّلَ اللهُ الْمُجَاہِدِینَ عَلَی الْقَاعِدِینَ اٴَجْرًا عَظِیمًا “

    ”خدا وند عالم نے مجاہدوں کو بیٹھنے والوں پر اجر عظیم کے ذریعہ فضیلت بخشی ہے“۔

    ابو حنیفہ: ”اچھا ٹھیک ہے تم اپنے بھائی سے یہ کہو کہ وہ کیسے حضرت علی کو حضرت ابو بکر و عمر سے افضل وبرتر سمجھتا ہے جب کہ یہ دونوں آنحضرت صلی الله علیه و آله وسلم کے پہلو میں دفن ہیں اورحضرت علی علیہ السلام کا مرقد رسول سے بہت دور ہے ۔رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کے پہلو میں دفن ہونا ایک بہت بڑا افتخار ہے یہی بات ان کے افضل اور بر تر ہونے کے لئے کافی ہے ۔“

    فضال: ”اتفاق سے میں نے بھی اپنے بھائی سے یہی دلیل بیان کی تھی مگر اس نے اس کے جواب میں کہا کہ خدا وند عالم قرآن میں ارشاد فرماتا ہے:

    ”لاَتَدْخُلُوا بُیُوتَ النَّبِیِّ إِلاَّ اٴَنْ یُؤْذَنَ لَکُمْ“

    ”رسول کے گھر میں بغیر ان کی اجازت کے داخل نہ ہو“۔

    یہ بات واضح ہے کہ رسو ل خدا کا گھر خود ان کی ملکیت تھا اس طرح وہ قبر بھی خود رسول خدا کی ملکیت تھی اور رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم نے اانھیں ا س طرح کی کوئی اجازت نہیں دی تھی اور نہ ان کے ورثاء نے اس طرح کی کوئی اجازت دی۔“

    ابو حنیفہ: ”اپنی بھائی سے کہو کہ عائشہ اور حفصہ دونوں کا مہر رسول پر باقی تھا، ان دونوں نے اس کی جگہ رسو ل خدا کے گھر کا وہ حصہ اپنے باپ کو بخش دیا۔

    فضال: ”اتفاق سے یہ دلیل بھی میں نے اپنے بھائی سے بیان کی تھی تو اس نے جواب میں کہا کہ خداوند عالم قرآن میں ارشاد فرما تا ہے۔

    ” یَااٴَیُّہَا النَّبِیُّ إِنَّا اٴَحْلَلْنَا لَکَ اٴَزْوَاجَکَ اللاَّتِی آتَیْتَ اٴُجُورَہُنّ“

    ”اے نبی!ہم نے تمہارے لئے تمہاری ان ازواج کو حلال کیا ہے جن کی اجرتیں (مہر)تم نے ادا کر دی“۔

    اس سے تو یہی ثابت ہوتا ہے کہ رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم نے اپنی زندگی میں ہی ان کا مہر ادا کر دیا تھا“۔

    ابو حنیفہ: ”اپنے بھائی سے کہو کہ عائشہ حفصہ رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کے بیویاں تھیں انھوں نے ارث کے طور پر ملنے والی جگہ اپنے باپ کو بخش دی لہٰذا وہ وہاں دفن ہوئے“۔

    فضال: ”اتفاق سے میں نے بھی یہ دلیل بیان کی تھی مگر میرے بھائی نے کہا کہ تم اہل سنت تو اس بات کا عقیدہ رکھتے ہو کہ پیغمبر وفات کے بعد کوئی چیز بطور وراثت نہیں چھوڑتا اور اسی بنا پر رسول خدا صلی الله علیه و آله وسلم کی بیٹی جناب فاطمہ الزہرا سلام اللہ علیہا کو تم لوگوں نے فدک سے بھی محروم کردیا اور اس کے علاوہ اگر ہم یہ تسلیم بھی کر لیں کہ خداکے نبی وفات کے وقت وارث چھوڑتے ہیں تب یہ تو سبھی کو معلوم ہے کہ جب رسول صلی الله علیه و آله وسلم کا انتقال ہوا تو اس وقت آپ کی نو بیویاں تھیں۔ اور وہ بھی وارث کی حقدار تھیں اب وراثت کے قانون کے لحاظ سے گھرکا آٹھواں کاحصہ ان تمام بیویوں کا حق بنتا تھا اب اگر اس حصہ کو نو بیویو ں کے درمیان تقسیم کیا جائے تو ہر بیوی کے حصے میں ایک بالشت زمین سے زیادہ نہیں کچھ نہیں آئے گا ایک آدمی کی قد وقامت کی بات ہی نہیں“۔

    ابو حنیفہ یہ بات سن کر حیران ہو گئے اور غصہ میں آکر اپنے شاگردوں سے کہنے لگے:

    ”اسے باہر نکالو یہ خود رافضی ہے اس کا کوئی بھائی نہیں ہے
    16 May at 07:11 ·

  2. WHY THEY ARE ALL SILENT , NO ARGUMENTS , THAT PROVES THAT THEY WERE EVIL, GREEDY USURPERS AND NOT ONLY EXTREMELY INFERIOR
    BUT DESERVING JAHANNUM . NO DOUBT IN HURRY TO ATTAIN POWER
    THEIR DAUGHTERS CAUSED THE DEATH OF THE RASOOL E AKRAM (SAAWS)
    THROUGH POISIONING AS IS REPORTED IN MANY AHADEES WHICH THEIR
    FOLLOWERS TERM AS ZAEEF OR FALSE BUT THE CIRCUMSTANCIAL EVIDENCE PROVE THEIR GUILT . ALLAH KNOWS BEST . WE ARE HAPPY THAT WE ONLY FOLLOW THOSE WHOM RASOOL (SAAWS) INSTRUCT US AND WHOSE PURITY , IMMACULATION , TAHARAT ALLAH (swt) GAURANTEES IN
    HOLY QORAN . (INNAMA YUREEDALLAHA LEUZHIBA ANKAMUR RIJSA AHLALBAYTE WA TAHHARAKUM TATHEERAH ) AND THE WORD AHLEBAYT DO NOT INCLUDE WIVES OTHERWISE THEY WILL HAVE TO ANSWER WHERE WERE THOSE TWO LADIES IN MUBAHILA AND WHY RASOOL AKRAM (SAAWS) DID NOT INCLUDE THEM UNDER THE KISSA E YAMANI OR WAS IT TOO short (TUNG) FOR THEM (sic). WAS SALAM .

  3. Hasan

    الــلَّــهُــمَّ صَــلِّ عَــلَــى مُــحَــمَّــدٍ وآلِ مُــحَــمَّــدٍ

    Muhammad o Al-e-Muhammad (S.A.W.W.) k dushman pay La’nat Bay Shumaaaar!

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s